عراق

عراق میںانتخابات کے پہلے مرحلے میں وٹنگ شروع

shiite_news_iraq_election

اتوار کو عراق میں ہو نے والے انتخابات کے دوران ممکنہ دہشت گردی سے نمٹنے کیلئے عراقی سکیورٹی فورسز نے انتظامات مکمل کرلئے ہیں ۔انتخابات کے پہلے مرحلے میں آج وٹنگ شروع ہوگئی ہے۔ عراقی انتخابات دو مرحلوں میں ہورہے ہیں، آج پہلے مرحلے میں سکیورٹی اہلکار، قیدی، اسپتال کے عملے اورمریض وٹنگ کرینگئے۔ الیکشن کمیشن کے مطابق آج سات لاکھ وٹر اپنا حق رائے دہی استعمال کر رہے ہیں، جن میں 6 لاکھ سکیورٹی اہلکار اور پچاس ہزار قیدی شامل ہیں ۔

دوسرا انتخابی مرحلہ 7مارچ کو ہو گا ۔ انتخابات میں 6200 امیدوار 352نشستوں کیلئے انتخاب لڑ رہے ہیں۔ ان میں سے 82خواتین امیدوار بھی شامل ہیں۔ انتخابات میں اہم امیدوار موجودہ وزیراعظم نوری المالکی ، نائب صدر عبدللہ المہدی ، وزیر خزانہ باقر جابر ، وزیرداخلہ جوادالبولانی شامل ہیں۔ انتخابات کی بات یہ ہے کہ اس بار82خواتین بھی انتخابات لڑ رہی ہیں۔18.9ملین وٹرزاپنا حق رائے دہی استعمال کرینگئے۔ تاہم ماہرین عراق کے موجودہ حا لات کی پیش نظر وٹر ٹرن آؤٹ کے بارے میں کوئی پیش گوئی نہیں کر رہے۔ ان کا خیال ہے کہ ملک کے حالات اور انتخابات میں دہشت گردی روکنے کیلئے کئے جا نے والے اقدامات کی وجہ سے وٹنگ کا عمل متاثر ہوسکتا ہے۔ عراق میں سکیورٹی فورسسز نے انتخابات کیلئے پولنگ اسٹیشنوں پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیئے ہیںاورانتخابات کے دن سرکاری طورپر گاڑیوں کی نقل وحرکت پر بھی پابندی ہے۔وٹوں کی گنتی پولنگ اسٹیشن پر ہی ہو گی۔ ابتدائی نتائج ہر پولنگ اسٹیشن کے باہر 24گھنٹوں کیلئے لگا دیئے جائیں گے۔جس کہ بعد تمام ڈیٹا ایک جگہ جمع کیا جائے گا۔حتمی نتائج کا اعلان مارچ کے آخر میں ہونے کاامکان ہے شیعت نیوز کے سینئر تجزیہ کار کے مطابق: صدام حکومت کے خاتمے کہ بعد عراق میں دوسرے عام انتخابات میں امریکی اور سعودی حکومتوں کی کوششیں ہے کہ عراق میں صدامی باقیات کو بر سرِاقتدار لایا جاسکے۔ سعودی عرب اور امریکہ عراق انتخابات کہ موقع پر لبنان طرز کی پالیسی پر عمل پیرا ہیں کہ مذہبی منافرت اور قبائلی اختلافات کو ہوا دے کر عراق میں بعث (صدامی)پارٹی کے دہشت گردوں کو برسراقتدارلایا جا سکے۔ لیکن تا حال سعودی اور امریکی استعمار اپنی سازشوں میں ناکام نظر آتے ہیں۔

 

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close