سعودی عرب

سعودی عرب: اہل تشیع پر بڑھتے ہوئے دباؤ پر رد عمل, عالمی اہل بیت (ع) اسمبلی کا بیان

shiite_ahlulbaytعالمی اہل بیت (ع) اسمبلی نے سعودی عرب میں اہل تشیع پر بڑھتے ہوئے دباؤ کے پیش نظر ایک بیان جاری کرکے سعودی عرب کے با تدبیر حلقوں اور شخصیات سے اپیل کی ہے کہ حکومت کے ساتھ مظلوم عوام کا پیوند سست ہونے کا سد باب کریں۔

عالمی اہل بیت (ع) اسمبلی نے الخبر کے علاقے میں شیعیان اہل بیت (ع) پر بڑھتے ہوئے سعودی دباؤ پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے اہم بیان جاری کیا ہے۔

 

بیان کا متن

بسم اللہ الرحمن الرحیم

وَمَنْ أَظْلَمُ مِمَّن مَّنَعَ مَسَاجِدَ اللّہ أَن يُذْكَرَ فِيہا اسْمُہ وَسَعَى فِي خَرَابِہا أُوْلَئِكَ مَا كَانَ لَہمْ أَن يَدْخُلُوہا إِلاَّ خَآئِفِينَ لہمْ فِي الدُّنْيَا خِزْيٌ وَلَہمْ فِي الآخِرَةِ عَذَابٌ عَظِيمٌ۔

(سورہ مبارکہ بقرہ ـ آیہ 114)

اور اس شخص سے بڑھ کر ظالم کون ہوگا جو اللہ کی مسجدوں میں اس کے نام کا ذکر کیے جانے سے روک دے اور انہیں ویران کرنے کی کوشش کرے! انہیں مساجد میں خوف و وحشت کے بغیر داخلے کا حق نہیں ہے اور ان کے لئے دنیا میں ذلّت اور خواری ہے اور آخرت میں بڑا عذاب ہے۔

افسوس کا مقام ہے کہ سعودی عرب میں پیروان مذہب اہل بیت (ع) پر دباؤ اور ان کے مسائل و مشکلات میں شدت آئی ہے؛ گوکہ اس طرح کے رویئے اس سے قبل بھی سعودی سرکاری اداروں میں اثر و رسوخ رکھنے والے انتہا پسند افراد اور حلقوں کی جانب سے ہمیشہ سے جاری تھے اور حراست میں لینے، تفتیش کرنے، قلیل المدت اور طویل المدت قید و بند کی صعوبتیں مسلط کرنے، مذہبی اور دینی مراسمات سے منع کرنے اور شہری حقوق سلب کرنے کی صورت میں ہمیشہ سے جاری رہے ہیں لیکن حال ہی میں ایک مسلمان کے مسلّمہ ترین حق ـ یعنی نماز قائم کرنے کے حق ـ کو بھی پامال کیا گیا ہے اور اس طرح سعودیوں کے رویئے افراط اور انتہاپسندی کی تمام حدیں پھلانگ دیں حتی کہ الخبر کے پیروان اہل بیت (ع) کی مسجدیں بند کردی گئی ہیں بلکہ انہیں سنی مساجد میں سنی امام کی اقتداء میں نماز جماعت ادا کرنے سے بھی محروم کیا گیا ہے۔

عالمی اہل بیت (ع) اسمبلی ایک غیر سرکاری بین الاقوامی فورم کی حیثیت سے دنیا کے انسانی حقوق کی علمبردار تنظیموں کی توجہ سعودی عرب کے علاقے “الشرقیہ” کے مظلوم عوام کے مصائب اور درد و رنج اور ان پر مسلط کردہ گھٹن اور دھونس کی طرف مبذول کراتے ہوئے سعودی حکومت سے پرزور مطالبہ کرتی ہے کہ انتہاپسند پریشرگروپوں کے سامنے سر تسلیم خم نہ کرے اور ان مسائل و مشکلات کا خاتمہ کرے۔

سعودی عرب کے حکمرانوں کو اس حقیقت کی طرف توجہ مبذول کرنی چاہئے کہ پیروان اہل بیت (ع) جزیرہ نمائے عرب کی آبادی کا عظیم حصہ ہیں اور سعودی عرب کے کئی ملین باشندے مذہب اہل بیت علیہم السلام کے پیروکار ہیں اور ان سے بے رخی اور ان پر بڑھتا ہوا دباؤ حکومتی مشینری اور اس مظلوم طبقے کے درمیان رشتے سست ہونے پر منتج ہوسکتا ہے لہذا اس عظیم نقصان کے ظہور پذیر ہونے سے قبل ہی توقع کی جاتی ہے کہ سعودی عرب کے ذمہ دار اور باتدبیر حلقے اور اشخاص اس مسئلے کا سدباب کریں۔

عالمی اہل‏بیت(ع) اسمبلی

24 اپریل 2010

 

مآخذ: ابنا

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close