لبنان

قرآن مجید کی توہین کا منصوبہ،لبنانی صدر مائیکل سلیمان کی شدید مذمت

Lebanese-President-Michel-Sleimanلبنان کے صدر مائیکل سلیمان نے امریکی پادری کی جانب سے قرآن مجید کو نذر آتش کرنے کے منصوبے کے اعلان کی شدید الفاظ میںمذمت کی اور اسے انسانیت سے گرا ہوا فعل قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ کوئی بھی مذہب کسی بھی دوسرے مذہب کی توہین کی اجازت نہیں دیتا۔شیعت نیوز کے مطابق لبنانی صدر مائیکل سلیمان نے لبنان میں عید الفطر کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے امریکی پادری کی جانب سے گیارہ ستمبر کی یاد میں مقدس کتاب  قرآن پاک کی دو سو کاپیوں کو نذر آتش کرنے کے گھٹیا مںصوبے کو شیطانی منصوبہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ دنیاکے تینوں بڑے مذاہب اسلام،عیسائیت اور یہودیت میں کہیں بھی ایسی تعلیمات موجود نہیں کہ کسی بھی مذہب کی مقدس کتاب کو نذر آتش کیا جائے یا سکی توہین کی جائے۔
لبنانی صدر کا کہنا تھا فلوریڈا چرچ کے پادری در اصل نہ تہ عیسای تعلیمات پر عمل پیرا ہیں اورنہ انسانیت کے درجے میںہیں بلکہ ان کے اس شیطانی منصوبے نے واضح کر دیاہے کہ وہ شیطان کے آلہ کار ہیں اور دنیا میں بد امنیت کے فروغ کے لئے کوشاں ہیں،ان کاکہنا تھاکہ امریکی حکومت فی الفور فلوریڈا چرچ کے شیطان صفت پادری کو سزا دے اور عبرت کا نشان بنائے۔
واضح رہے کہ امریکی پادری کی جانب سے گیارہ ستمبر کو نائن الیون کے نو سالم کمل ہونے کی یاد میں مسلمانوںکی مقدس ترین کتاب قرآن مجید کی دو سو کاپیوں کو نذر آتش کرنے کا گھناؤنا مںصوبہ بنایا گیاتھا تاہم دنیا بھر سے شدید احتجاج اور دباؤ کے باعث شیطان پادری اس پر عمل کرنے سے قاسر رہا تاہم دنیا بھر کے ممالک اور سربراہوں نے امریکی پادری کی شدید مذمت کی ہے اور امریکی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ اس قسم کے عناصر کو سخت سےسخت سزا دی جائے تا کہ آئیندہ کوئی اس طرح کے گھناؤنے منسوبے نہ بنا سکے۔

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close