پاکستان

رحمان ملک کاآئی ایس او کے خلاف بیان امریکی اور اسرائیلی عزائم کی عکاسی ہے

shiite_iso_president_prامامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پاکستان کے مرکزی صدر عادل بنگش نے لاہور میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ آئی ایس او ہمیشہ استحکام پاکستان کے لئے سرگرم رہی ہے،رحمان ملک کاآئی ایس او کے خلاف بیان امریکی اور اسرائیلی عزائم کی عکاسی ہے،جبکہ کراچی میں آئی ایس او پاکستان کے مرکزی سینئر نائب صدر رحمان شاہ اور دیگر نے کراچی پریس کلب میں رحمان ملک کی جانب سے آئی ایس او کے خلاف بیان کو بے بنیاد قرار دیا۔

لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی صدر عادل بنگش نے کہا کہ گذشتہ روز وزیر داخلہ رحمان ملک کی جانب سے آئی ایس او کو فرقہ واریت میں ملوث کرنے کا بیان سامنے آنا اس بات کی کھلی دلیل ہے کہ امریکہ اور اسرائیل کے عزائم کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لئے رحمان ملک ملک کی نظریاتی اور جغرافیائی سرحدوں کا تحفظ کرنے والی ملک گیر طلباء تنظیم کے خلاف گھناؤنی سازشوں کا نشانہ بنا رہے ہیں،ان کا کہنا تھا کہ انتہائی افسوس ناک بات ہے کہ پاکستان کے حکمران اپنے غیر ملکی آقاؤں امریکہ اور اسرائیل کی خوشنودی کی خاطر اس طرح کے شرمناک فعل کے مرتکب ہو رہے ہیں جبکہ دوسری جانب حکومتی اہلکار کالعدم جماعتوں کے رہنماؤں اور دہشت گردوں کا سہارا لے رہے ہیں اور ان کی پشت پناہی میں مصروف عمل ہیں۔مرکزی صدر آئی ایس او پاکستان کا کہنا تھا کہ امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن پاکستان انیس سو بہتر سے لے کر آج تک ہمیشہ سے نوجوان طالب علموں کو وحدت مسلمین اور استحکام کا درس دیتی آئی ہے۔ پھر اپنا یہ پیغام طلباء کی سطح سے بڑھا کر ملک عزیز کے ہر مسلک ، گروہ اور طبقہ تک پہنچانے میں صف اول کا کردارادا کیا ۔آئی ایس او پاکستان ملک کی واحد طلباء تنظیم ہے جس نے اسلام اور پاکستان دشمن عناصر کو بے نقاب کرنے کے لئے ستر کی دہائی سے آواز بلند کی۔ان کا کہنا تھا کہ آئی ایس او کو یہ اعزاز بھی حاصل ہے کہ عالمی استعمار بالخصوص امریکہ، اسرائیل، بھارت کے مکروہ عزائم سے پردہ اٹھانے کے لئے مردہ باد امریکہ، مردہ باد اسرائیل، مردہ باد ہندوستان کے شعار کو ہر شہری کے کانوںتک پہنچایاآج پاکستان کا بچہ بچہ یہ جان چکا ہے کہ اس بدامنی، دہشت گردی اور ملک کے عدم استحکام میں کس کا ہاتھ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج ہر مذہبی تنظیم، سیاسی جماعت، سوشل تنظیموں اور اداروں کی زبان پر مردہ باد امریکہ کے الفاظ جاری ہیں۔ مگر افسوس کہ ہمارے نادان حکمران غلامی کی زنجیروں میں جکٹرے ہوئے ہیں۔ باوجود اس کے کہ وہ عالمی دہشت گرد سرزمین پاک پر حملے کر رہے ہیں اور کھلم کھلا گھوم پھر رہے ہیں ،یہ ناعاقبت اندیش حکمران نہ صرف یہ کہ انہیں کھلی چھٹی دیتے ہیں بلکہ ان کے احکامات کو من و عن لاگو کرنے میں بھی کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کرتے۔ دیگر سینکڑوں مثالوں میں سے ایک مثال یہ ہے کہ گزشتہ سال امریکی سفیر نے مارچ کے مہینے میں اپنے چیلے رحمان ملک کو یہ احکامات جاری کئے کہ پاکستان کے اندر امریکہ کے خلاف اٹھنے والی آواز کو دبانے کے لئے آئی ایس او پاکستان کا راستہ روکا جائے کیونکہ غزہ ، فلسطین پر امریکی و اسرائیلی حملوں کے خلاف پاکستان میں ایک بھر پور اور کامیاب ـ”تحریک حمایت فلسطین”کا آغاز کر دیا تھا۔ رحمان ملک نے امریکی سفیر سے کئے گئے وعدے کو پورا کرنے کے لئے اس سال مارچ میں اپنی مذموم بیان بازی کا سہارا لیا۔ حالانکہ اس تنظیم کا ماضی اس بات کی گواہی دیتا ہے کہ اس نے ہمیشہ استحکام پاکستان کے لئے عملی اقدامات کئے ہیں۔ ہمیشہ پاک فوج کے شانہ بشانہ ریلیف کے کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ہے۔ چاہے وہ اکتوبردو ہزر پانچ کے زلزلے میں کئی مہینوں تک ریلیف کیمپ لگانا ہو یا پھر پنجاب، سندھ ، بلوچستان کے سیلاب زدگان کی فوری ریلیف کا روائیاں ہوں۔ ان جوانوں نے جانوں پر کھیل کر اپنا کردار ادا کیا۔

 

 

اس طرح طلباء کے حقوق کے لئے آواز اٹھانے کی خاطر متحدہ طلباء محاز کے قیام کا سہرا بھی آئی ایس او کو جاتا ہے۔ آئی ایس او رسول اکرم ؐ کی ذات مقدس کو مرکز اتحاد مانتے ہوئے ایک عرصے سے 12تا17ربیع الاول ہفتہ وحدت المسلمین مناتی ہے۔اس کے ساتھ اپنے نصب العین نوجوانوں کو تعلیمات قرآن اور سیرت محمد ؐو آل محمدؑ کے مطابق رنگ، نسل،ذات، فرقہ کی تقسیم بندی سے دوری رکھتی ہے اور رکھتی آئی ہے۔
مرکزی صدر کا کہنا تھا کہ ہم وزیر داخلہ رحمان ملک کے بیان کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے اس کی بھر پور مذمت کرتے ہیں جو اس جیسی محب وطن اور قربانی کے جذبے سے سر شار تنظیم پر سراسرالزام ہے۔
عادل بنگش نے مزید کہا کہ ہمیں افسوس اس بات کا ہے کہ آج دہشت گرد و کالعدم تنطیموںکے کارکنان و سربراہان توحکمرانوں کی گودوں میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ انہیں حکومتی سربراہی حاصل ہے جب چاہیں قتل و غارت، جلاؤ گھیراؤ اور بم دھماکوں کا بازار گرم کرتے ہیں۔ ہمیں افسوس اس بات کا بھی ہے کہ اشتہاری مجرموں، ملک و قوم کا خزانہ لوٹنے والے، نیب کے سزا یافتہ آج اس مظلوم ملت کے تقدیر کا فیصلہ کرنے کے لئے ایوانوں میں بیٹھے ہیں۔ حال ہی میں وزیر داخلہ پنجاب رانا ثناء اللہ نے اپنے ووٹوں کے چکر میں ایک کالعدم تنظیم کی تمام تر خون ریز داستانوں اور ملک دشمنی کے اقدامات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ان کی حوصلہ افزائی کی ۔ یہی وجہ ہے کہ مختلف مقامات پر بالخصوص لاہور میں بم دھماکوں کا سلسلہ شروع ہوا ۔ ملک کی سیکیورٹی ایجنسیاں جانتی ہیں کہ انہی کالعدم تنظیموں کے لوگ رانا ثناء اللہ اور رحمان ملک جیسے ملک دشمن سیاست دانوں کے تعاون سے اہم قومی تنصیبات، اہم حکومتی دفاتر اور دفاعی اداروں پر حملے کرتے رہے ہیں۔ ہم خوب جانتے ہیں کہ دیگر ارباب اختیار کے ساتھ ساتھ رحمان ملک کس راستے اور اوچھے ہتھکنڈوں سے موجودہ منصب پر فائز ہوا۔ اس کے شرمناک اور بے عزتی سے لبریز واقعات کو زبان پر لاتے ہوئے شرم آتی ہے۔ میڈیا بھی ان کے کردار سے خوب واقف ہے۔ اس کے باوجود کہ امریکی کانگریس کے اراکین نے پاکستان میں بلیک واٹر (Xe) کے اہلکاروں کی موجودگی کا اعتراف کیا ہے مگر رحمان ملک بار بار ان کی غیر موجودگی کا اعلان کرتا ہے۔جو کہ اس کے ایسے گروہوں سے تعلقات کا واضح ثبوت ہے۔اس کی نا اہلی کا بڑا ثبوت بھی یہی ہے کہ اس کو ابھی تک یہ معلوم نہیں کہ آئی ایس او ایک طلباء تنطیم ہے جس کے عہدیداروں اور ذمہ داروں کی مدت ایک سال کے لئے ہوتی ہے۔ بہر حال ہم سمجھتے ہیں کہ رحمان ملک کا بیان فرقہ واریت کو ہوا دینے کی سازش ہے جو وہ اپنے آقاؤں بالخصوص امریکی ایماء پرادا کر رہا ہے۔ اس سازش میں ہماری معلومات کے مطابق پیپلز پارٹی کی حکومت اور اس کی حلیف جماعتوں کا بھی دخل ہے جو خود دہشت گردوں کے متبادل کا کام کرتے ہیں۔ہم صدر اسلامی جمہوریہ پاکستان آصف زرداری، وزیراعظم یوسف رضا گیلانی سے پر زور اپیل کرتے ہیں کہ نااہل شخص رحمان ملک کے اس خود ساختہ، بے بنیاد اور مذموم بیان کا فوری نوٹس لے اور اس غدار وطن کو فوری طورپر اپنے منصب سے ہٹادیا جائے ۔

 

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close