پاکستان

اسلام آباد:جنوبی پنجاب فرقہ پرست گروہوں اور پنجابی طالبان کی سرگرمیوں کا مرکز بن چکا ہے

shiite_Mwm_Press_conferenceمجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکریٹری جنرل علامہ ناصر عباس جعفری ،ڈپٹی جنرل سیکریٹری علامہ امین شہیدی،علامہ عابد بہشتی اور دیگر نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جنوبی پنجاب فرقہ پرست گروہوں اور پنجابی طالبان کی سرگرمیوں کا مرکز بن چکا ہے۔
شیعت نیوز کے نمائندے کی رپورٹ کے مطابق مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے رہنماؤں نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی موجودہ صورت حال انتہائی ابتر ہے اور دہشت گردی عروج پر ہے ، خود کش حملوں نے عام شہریوں کی نیند حرام کر رکھی ہے کہ نہ جانے زندگی کی کس گلی میں شام ہو جائے ، پہلے مساجد اور امام بارگاہوں کو مسلسل نشانہ بنایا جاتا رہا اور اب مقدس مزارات کے احترام کو بھی پامال کر کے دہشت گردوں نے دعا اور عبادت کے لیے آنے والے نمازیوں کو بھی خاک و خون میں نہلا دیا ۔ ملک بھر میں ٹارگٹ کلنگز نے عوام کو انتہائی اضطراب میں مبتلا کر دیا ہے ، فرقہ پرست دہشت گرد پنجاب حکومت کی سرپرستی میں آزاد اور غیر قانونی سرگرمیوں میں مصروف ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا کی آزادی کا دم بھرنے والی پنجاب حکومت نے آزاد میڈیا کو زنجیر پہنانے کے لیے جو قرارداد پیش کی وہ بھی آپ کے سامنے ہے جو خود غرضی ، مفاد پرستی اور کرپشن پر پردہ ڈالنے کی بد ترین کوشش تھی ۔ جب کہ ہم سمجھتے ہیں کہ آزاد میڈیا اس ملک کے کرپٹ نظام کی اصلاح کا بہترین ذریعہ ہے۔
رہنماؤں کا کہنا تھا کہ جنوبی پنجاب فرقہ پرست گروہوں اور پنجابی طالبان کی سرگرمیوں کا مرکز بن چکا ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ کراچی کی سرزمین روز بے گناہ شہریوں کے خون سے رنگین ہو رہی ہے۔ ڈیرہ اسماعیل خان میں ہمارے نوجوانوں کا آئے روز قتل معمول بن چکا ہے ، کرم ایجنسی کے محب وطن شہری اپنے ہی پیارے وطن آنے کے لیے افغانستان کا راستہ اپنانے پر مجبور ہیں ۔ جس طرح صہونیوں نے غزہ کا محاصرہ کر کے وہاں کے مظلوم عوام کا دانہ پانی بند کر رکھا ہے ،انہوں نے کہا کہ کرم ایجنسی کا بھی طالبان نے اسی طرح محاصرہ کر رکھا ہے اور اشیاء خوردو نوش سے لے کر ادویات تک کی شدید قلت ہے اور آپ نے خود بھی مشاہدہ کیا کہ گزشتہ جمعرات کو ملیشیاء کے کمانڈنٹ کرنل توصیف نے پشاور سے صحافیوں کو ہیلی کاپٹر میں پارا چنار بلا کر محض جھوٹی بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ ٹل پاراچنار روڈ ہم کھول چکے ہیں جبکہ زمینی حقائق اس کے بالکل برعکس تھے گویاسفید جھوٹ بول کر پاکستان کے 18 کروڑ عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکا گیا جب کہ صرف تین دن بعد پاراچنار کے مظلوم عوام کو ایک بار پھر پاراچنار سے براستہ افغانستان پشاور آتے ہوئے 12 محب وطن جوانوں کی قربانی دینی پڑی ۔
علامہ ناصر عباس کاکہنا تھا کہ ہمارے باخبر وزیر داخلہ جناب رحمن ملک کا ارشاد بھی آپ نے ملاحظہ فرمایا کہ انہوں نے جھٹ سے افغان حکومت سے مطالبہ کر دیا کہ آپ اپنا بارڈر بند کر دیں تاکہ کرم ایجنسی کے لوگ پشاور آنے کے لیے افغانستان کا راستہ بھی ا ستعمال نہ کر سکیں ، گویا وہ کہہ رہے ہیں کہ کرم ایجنسی کے بے گناہ شریف اور امن پسند شہری وہاں بھوک سے مرتے رہیں لیکن نہ ٹل پاراچنار راستہ کھلے گا اور نہ ہی افغانستان کا راستہ کھلا ہونا چاہیے ۔ ان کا کہنا تھا کہ     بلوچستان میں 400 سے زیادہ لوگ ٹارگٹ کا نشانہ بن چکے ہیں ، سینکڑوں خاندان برباد ہو چکے ہیں ، 90 ہزار سے زیادہ لوگ بلوچستان چھوڑ کر دیگر علاقوں کا رخ کر چکے ہیں لیکن نہ کوئی مجرم گرفتار ہو اہے نہ کسی کو سزا ملی ہے ۔
رہنماؤں نے مزید کہا کہ ا یک طرف تو مہنگائی ، کرپشن ، چور بازاری ،لوٹ مار ، بھوک کی وجہ سے اجتماعی خود کشیاں اب معمول بن چکی ہیں دوسری طرف امریکی ، برطانوی اور نیٹو فورسز کا پاکستان کے اندرونی معاملات میں اثر و رسوخ اتنا بڑھ چکا ہے کہ گویا ہمارا ملک اب مغربی ممالک کی چراگاہ کی حیثیت اختیار کر چکا ہے ۔
ان کا کہنا تھا کہ اس صورت حال کے پیش نظر قوم میں وحدت اور وطن کی حفاظت کا جذبہ اجاگر کرنے کے لیے یکم اگست 2010ء کو اسلام آباد میں پاکستان بھر سے محب وطن ، جوانوں کا اجتماع ہو گا ، جسے ”وحدت ملت کنونشن ” کا نام دیا گیا ہے ۔ اس کنونشن کا ایک حصّہ استحکام پاکستان ریلی پر مشتمل ہو گا اور آخری حصّہ ”استحکام پاکستان کانفرنس” ہو گا جو پریڈ گراؤنڈ اسلام آباد میں منعقد ہو گا ۔ انہوں نے مزید تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ وحدت ملت کنونشن ” ملکی استحکام ، اخوت و بھائی چارے اور اسلامی وحدت کے حصول کے لیے سنگ میل ثابت ہو گا اور دہشت گردی ، فرقہ واریت ، کرپشن اور سامراجی قوتوں کے اثر و رسوخ کے خلاف پاکستانی محب وطن قوم کی یکجہتی اور اتحاد کا مظہر ہو گا

Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close