مقبوضہ فلسطین

اسرائیلی فوجیوں کے تشدد سے فلسطینی عہدے دار شہید

شیعیت نیوز{مانیٹرنگ ڈیسک}دریائے اردن کے مغربی کنارے کے علاقے میں اسرائیلی فوجیوں نے یہودی بستیوں کے خلاف احتجاج کرنے والے فلسطینی مظاہرین کو تشدد کا نشانہ بنایا ہے جس کے نتیجے میں فلسطینی اتھارٹی کے یہودی بستیوں سے متعلق امور کے انچارج زیاد ابو عین شہید ہوگئے ہیں۔
العربیۃ نیوزکے مطابق اسرائیلی فوجیوں نے بدھ کے روز مقبوضہ مغربی کنارے میں احتجاج کرنے والے مظاہرین پر اشک آور گیس کے گولے پھینکے ہیں اور ان کو تشدد کا نشانہ بنایا ہے۔اسرائیلی فوجیوں نے زیاد ابوعین کو اٹھا کر زمین پر پٹخ دیا تھا۔ انھیں شدید زخمی حالت میں اسپتال لے جایا جارہا تھا لیکن وہ راستے ہی میں دم توڑ گئے۔
ذرائع کاکہنا ہےکہ فلسطینی کمیٹی برائے مزاحمت یہودی بستیاں سے تعلق رکھنے والے کارکنان اور بعض غیرملکی ایک اسرائیلی بستی کے نزدیک احتجاج اور زیتون کے پودے لگانے کے لیے جارہے تھے۔انھیں اسرائیلی فوجیوں نے ایک چیک پوائنٹ پر روک لیا،ان پر اشک آور گیس کے گولے برسائے اور پھر وہ مظاہرین کے ساتھ گتھم گتھا ہوگئے۔
یہ واقعہ فلسطینی گاؤں ترمسعیا کے نزدیک پیش آیا ہے۔وہاں سے زیادہ ابو عین کو ایمبولینس کے ذریعے رام اللہ منتقل کیا جارہا تھا لیکن وہ راستے ہی میں خالق حقیقی سے جا ملے۔اسپتال کے ڈائریکٹر احمد بیطاوی نے بتایا ہے کہ ابو عین کی موت چھاتی پر چوٹیں آنے کے نتیجے میں ہوئی ہے۔
فلسطینی صدر محمود عباس کی جماعت فتح کے ایک سرکردہ نما محمود العول کا کہنا ہے کہ وہ اور ابو عین دسیوں دوسرے افراد کے ساتھ مل کر اسرائیل کے زیر قبضہ اراضی پر امن کی علامت زیتون کے پودے لگانے کے لیے جارہے تھے۔اس دوران اسرائیلی فوجیوں نے انھیں روک کر تشدد کا نشانہ بنایا ہے۔
صدر محمود عباس نے ابو عین پراس سفاکانہ حملے کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ اس طرح کی کارروائی کو کسی صورت میں بھی قبول نہیں کیا جاسکتا ہے۔فلسطینی خبررساں ایجنسی وفا کے مطابق صدر عباس نے کہا کہ ”ہم واقعے کی تحقیقات کے نتائج سامنے آنے کے بعد ضروری اقدامات کریں گے”۔
تشدد کے اس واقعے کے بعد فلسطینی عہدے دار جبریل رجوب نے اسرائیل کے ساتھ سکیورٹی تعاون ختم کرنے کا اعلان کیا ہے۔اسرائیلی فوج نے فوری طور پر اس واقعے پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ رپورٹ کا جائزہ لے رہی ہے۔
شہید ابو عین فلسطینی اتھارٹی کے اسرائیلی یہودی بستیوں اور غرب اردن میں علاحدگی کی دیوار سے متعلق امور کے محکمے کے سربراہ تھے اور ان کا عہدہ وزیر کے برابر تھا۔قبل ازیں وہ قیدیوں سے متعلق امور کے نائب وزیر رہ چکے تھے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close