پاکستان

خلفاء راشدین کے ایام منانا حرام ہے، مفتی نعیم کا فتویٰ

مشہور و معروف دیوبند مکتب فکر کے عالم دین علامہ مفتی نعیم کے مدرسہ جامعہ بنوریہ کے آفیشل ویب سائٹ کے مطابق مفتی نعیم اینڈ کمپنی نے خلفاء راشدین سمیت دیگر بزرگان دین کے ایام شہادت و ولادت منانے کو حرام قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اسکی کوئی دین میں اجازت نہیں اور نا ہی یہ باعث ثواب ہے۔

دوسری جانب چونکہ منافقت انکی رگ رگ میں بسی ہوئی ہے لہذا فتویٰ کے دوسر ے حصے میں یہ صاحب کہتے ہیں کہ باطل کے مقابلے میں سیاسی حربہ (فرقہ واریت ) کے لئے منانے میں کوئی حرج نہیں۔

دھیاں رہے کہ آج اسی منافقانہ فتویٰ کی بنیاد پر مفتی نعیم کے حمایت یافتہ ملک دشمن فرقہ پرست  دہشتگرد ٹولہ مسلمانوں کے اہم ایام میں جان بوجھ کر خلفاء ثلاثہ کے شہادت کے ایام اور یوم کے نام پر فتنہ و فساد پیدا کرتا ہے، انکی یہ حرکت مفتی نعیم کے فتویٰ کے عین مطابق ہے، چونکہ یہ دیگر مسلمانوں (شیعہ و سنی) حضرات کو باطل سمھجتے ہیں لہذا انکے مقابلے میں سیاسی حربہ کے طور پر زبردستی ایام خلفاء کے نام پر کبھی محرم ،غدیر اور دیگر موقع پر فرقہ واریت کو ہوا دینے کے لئے ملک بھر میں جلسہ جلو س منعقد کرتے ہیں۔ جس میں خلفاء کی سیرت پر گفتگو کم اور دیگر فرقہ کا ایکسرے زیادہ ہوتا ہے۔

جبکہ حقیقت اسکے برعکس ہے، حضرت عمر کی شہادت 26 یا 27 ذی الحجہ ہے ، لیکن چونکہ شیعہ و سنی محرم میں امام حسین کی یاد پہلی تا دس محرم مناتے ہیں ، ان تکفیری و فرقہ پرست ٹولے نے زبردستی یکم محرم کو یوم عمرفاروق کا سوشہ چھوڑ ڈالا، اسی طرح جب مسلمان 18 ذی الحجہ کو یوم غدیر مناتے ہیں تو یہ حضرت عثمان کی شہادت کا شور مچانا شروع کردیتے ہیں ، حالانکہ حضرت عثمان کی شہادت 15 یا 17 ذی الحجہ ہے، اسی طرح دیگر ایام میں بھی ایسا ہی ہوتا ہے۔

مفتی نعیم کی آفیشل ویب کا امیج ذیل میں موجود ہے، خود ملاحظہ فرمائیں۔

NaeemFatwa-compressor.jpg
  

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close