پاکستان

وفاقی یزیدی پولیس نے جلوس انتظامیہ کیخلاف مقدمہ درج کرلیا

ایس ایس پی اسلام آباد رضوان گوندل صاحب نے گذشتہ روز اپنی قیادت میں امام حسین علیہ السلام کی یاد میں نکالا جانے والا 20 محرم کا روائتی جلوس پر وحشیانہ تشدد کرکے ثابت کیا ہے کہ موصوف نے کالعدم جماعت کے ایمان پر یہ جلوس روکا ہے۔ مسجد امام حسین کی انتظامیہ کیخلاف درج مقدمہ میں موقف اپنایا گیا ہے کہ کچھ شہریوں کو اعتراض تھا جس پر یہ جلوس روکا گیا۔

  آئی جی اسلام آباد صاحب یہ بتانا پسند فرمائیں گے کہ یکم محرم اور دس محرم یقینی دس روز قبل آپ نے کس قانون اور کس پرمٹ کے تحت کالعدم جماعت سپاہ صحابہ کو جلوس نکالنے کی اجازت دی اور سیکیورٹی فراہم کی؟۔ جبکہ نیشنل ایکشن پلان کے تحت کوئی کالعدم جماعت کوئی سرگرمی نہیں کرسکتی۔ آئین پاکستان کے تحت مذہبی رسومات کی ادائیگی شہریوں کا آئینی حق ہے لیکن یہ حق مسلم لیگ نون کی حکومت نے چھین لیا۔۔۔ یہ عام شہری کا سوال ہے کہ یہ ایف آئی آر اور مقدمہ کالعدم جماعت کیخلاف کیوں درج نہ کیا گیا۔ اگر بات اعتراض کی ہے کہ تو کیا مکتب اہل بیت کو ان کالعدم جماعتوں کے جلوسوں پر اعتراض نہیں ہے کیا؟۔ دس محرم کے کالعدم جماعت کے جلوس میں کیا کہا گیا وہ اب بھی ریکارڈ پر موجود ہے۔ جبکہ جلوس عزاداری میں تو فقط امام حسین علیہ السلام اور اہل بیت علیہ السلام کا زکر ہوتا ہے۔ ریاستی ادارے وہ کام انجام دیں جس سے عام شہریوں میں حق تلفی کا گمان اور شائبہ نہ ہو اگر یہ سلسلہ چلا نکلا تو اس کے نتائج بہرحال مثبت مرتب نہیں ہوں گے۔

 

 

11009140_1232874573405503_6049434232378457736_n.jpg

 

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close