پاکستان

کراچی دو گھنٹے میں تعلیمی اداروں سمیت پولیس اسٹیشن پر دستی بم حملے

شیعیت نیوز: شہر قائد میں اس وقت خوف کی فضا دیکھنے میں آئی جب دو گھنٹے کے اندر شہر کے تین مختلف مقامات پر دستی بم حملے کیے گئے۔

پہلا حملہ ضلع شرقی میں مبینہ ٹاون تھانے پر ، دوسرا ضلع وسطی میں کریم آباد میں طالبات کے کالج کے قریب بس اسٹاپ جبکہ تیسرا ضلع جنوبی میں نارتھ ناظم آباد کے ایک اسکول پر کیا گیا۔

پہلا دستی بم حملہ سپر ہائی وے کے قریب واقع مبینہ پولیس تھانے پر کیا گیا۔

پولیس کے مطابق موٹر سائیکل سوار ملزمان نے گھریلو ساختہ بوتل بم تھانے پر پھینکا جس سے ڈیوٹی پر تعینات ایک اہلکار زخمی ہوا۔

موٹر سائیکل سوار ملزمان حملے کے بعد بآسانی فرار ہو گئے۔

حملے میں آصف علی لاشاری نامی اہلکار معمولی زخمی ہوئے جنہیں فوری طور پر ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ شہر قائد میں یہ حملے ایسے وقت میں ہوئے ہیں جب سنیٹ کی قائمہ کمیٹی میں ڈی جی آئی بی آفتاب سلطان یہ دعویٰ کیا تھا کہ داعش کا نیٹ ورک پکڑا گیا ہے جو تعلیمی اداروں کا نشانہ بنانے کا ہدف رکھتا تھا، تاہم کراچی میں ان تین حملوں میں سے دو حملے تعلیمی اداروں پرکیئے گئے ہیں، یہ حملہ انٹیلی جنس اداروں کی بڑی کامیابی کو غلط ثابت کرنے اور دہشتگردوں میں پھیل جانے والی مایوسی کو توڑنے کے لئے بھی ہوسکتے ہیں لہذا اداروں کو مزید تیزی کے ساتھ ان دہشتگردوں اور انکے سہولت کاروں کے خلاف کاروائی کرنے کی ضرورت ہے، یہ بات بھی دھیاں میں رہے کہ ڈی آئی بی نے کہا تھا کہ لشکر جھنگو ی سپاہ صحابہ اور طالبان کے آپس میں گہر ے روابط ہیں۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close