عراق

جہاد النکاح سے انکار، داعش نے چار خواتین کو سنگسار کردیا

شیعیت نیوز: انصاف کا تقاضہ تو یہ ہے کہ جنسی ظلم کا نشانہ بننے والی خواتین کو فوری انصاف فراہم کیا جائے اور جنسی درندوں کو عبرتناک سزا دی جائے لیکن اس سے بڑا ظلم کیا ہوسکتا ہے کہ جنسی درندوں کو تو چھوا تک نہ جائے لیکن ان کے ظلم کا نشانہ بننے والی خواتین کو مجرم قرار دے کر سنگسار کردیا جائے۔

مغربی میڈیا کا کہنا ہے کہ داعش نے گزشتہ ہفتے اسی طرح کا ’انصاف‘ کیا ہے، جب چار خواتین کو زناکاری کی مرتکب قرار دے کر سنگسار کردیا گیا، جبکہ ان کی عصمت دری کرنے والے داعش کے جنگجوؤں کو کسی ہاتھ بھی نہیں لگایا۔ اخبار ”دی انڈیپینڈنٹ“ نے مقامی نیوز ایجنسی ”اے آر اے نیوز“ کے حوالے سے بتایا ہے کہ ان خواتین کو چند دن قبل گرفتار کیا گیا۔

 اخبار نے مقامی میڈیا ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ چاروں خواتین مبینہ طور پر داعش کے جنگجوؤں کے ہاتھوں جنسی ظلم کا نشانہ بنیں لیکن جب ان کے خلاف داعش کی عدالت میں مقدمہ چلایا گیا تو عصمت دری کرنے والے ملزمان کا ذکر تک نہ ہوا جبکہ خواتین کو ناجائز جنسی تعلق کا مرتکب قرار دے کر سنگساری کی سزا سنادی گئی۔ چاروں خواتین کو موصل شہر کے ایک عوامی مقام پر سینکڑوں لوگوں کے سامنے اجتماعی طور پر سنگسار کیا گیا۔

اخبار کا کہنا ہے کہ اس واقعے نے موصل کے شہریوں کو ہلا کر رکھ دیا ہے کیونکہ یہ تاثر عام پایا جا رہا ہے کہ خواتین کو داعش کے لوگوں نے ہی جنسی ظلم کا نشانہ بنایا اور داعش کی عدالت نے انہیں ہی سنگسار کرنے کا حکم جاری کر دیا، جبکہ مجرموں کو سزا دینا تو درکنار، ان کا نام تک سامنے نہیں آنے دیا گیا۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close