سعودی عرب

سعودی ولی عہد جمال خاشقجی کے قتل پرجوابدہ نہیں : سعودی وزیر خارجہ

عادل الجبیر کا کہنا تھا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان یا ان کے والد فرماں روا شاہ کے بارے میں کوئی بھی توہین آمیز گفتگو برداشت نہیں کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب میں ہماری قیادت ایک ڈیڈ لائن ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ ہر سعودی شہری کی نمائندگی کرتے ہیں اور ہر سعودی شہری ان کی نمائندگی کرتا ہے اور ہم ایسی کسی بھی چیز کو برداشت نہیں کریں گے جو ہمارے بادشاہ یا شہزادے کی توہین کرے ۔

واضح رہے کہ واشنگٹن پوسٹ کے لیے لکھنے والے امریکی رہائشی اور سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے ناقد جمال خاشقجی 2 اکتوبر کو استنبول میں واقعے سعودی قونصل خانے میں گئے تھے، جہاں انہیں قتل کرکے مبینہ طور پر اس کی لاش کے ٹکرے ٹکڑے کردیے گئے۔

ابتدائی طور پر سعودی عرب کی جانب سے اس معاملے تک طویل وقت تک انکار کیا گیا لیکن بعد ازاں سعودی حکام نے اس کی ذمہ داری قبول کی اور کہا کہ 21 افراد کو حراست میں لیا گیا، تاہم امریکی میڈیا میں لیک ہونے والی امریکی سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی (سی آئی اے) کی تحقیقات میں مبینہ طور پر محمد بن سلمان کی طرف اشارہ کیا گیا تھا۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close