پاکستان

الیکشن 2018 : داعش کے تین سہولت کار قومی اسمبلی کے نمائندے بننے گے؟؟

رواں سال الیکشن دوہزار اٹھارہ میں کئی دہشتگرد قومی و صوبائی اسمبلیوں میں جانے کی تیاریاں کررہےہیں جنکو پیغام پاکستان کانفرنس کے تحت این آر او دیا گیا ہے۔

خیال یہ کیا جارہا ہے کہ ان دہشتگردوں کو قومی دھارے میں لاکر انکے تشدد پسند و فرقہ وارانہ خیالات کو ختم کردیا جائے گا، جبکہ ماہرین نفسیات کا کہنا ہے کہ ایسا سوچنا غلط ہے ، کس کو بدلنا ہوا تو اسکا نظریہ تبدیل کیا جاتا ہے اسٹیٹس تبدیل کرنے سے انسان کا نظریہ بدلتا نہیں پختہ ہوجاتا ہے۔

واضح رہے کہ ملک بھر سے ویسے تو دسیوں داعشی فکر رکھنے والے افراد قومی و صوبائی اسمبلیوں میں جانے کی تیاریاں کررہے ہیں لیکن ان میں نمایاں داعش کے سہولت کار بلوچستان سے مولوی رمضان مینگل، جھنگ سے مولوی لدھیانوی، اور کراچی سے اورنگزیب فاروقی جیسے افراد ہیں جنکے بیانات اور خفیہ ایجنسیوں کی رپورٹس سے ثابت ہے کہ یہ داعش کے پاکستان میں سہولت کار ہیں، جبکہ سیکڑوں پاکستانیوں کو انکے فرقہ وارانہ اور تشدد پسند نظریات قتل کردیا گیا۔

اگر یہ اسمبلیوںمیں جاتے ہیں انکی جماعت اور تکفیری نظریہ کو مزید تقویت حاصل ہوجائے گی، جو پاکستان سالمیت کے لئے خطرہ بھی بن سکتے ہیں۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close