پاکستان

واقعی تبدیلی آگئی ہے۔۔۔پاکستانی پاسپورٹ پر اسرائیلی ویزے کے اجراءکی اجازت

شیعیت نیوز: پاکستان میں تبدیلی آنہیں رہی بلکہ آگئی ہے، جی ہاں ، پاکستان کی تاریخ میں پہلی پر پاکستانی پاسپورٹ پر اسرائیلی ویزا لگوانے کی اجازت جاری کردی گئی ہے،تفصیلات کے مطابق کراچی کے رہائشی فیشل بین خلدکو پاکستانی وزارت خارجہ کی جانب سے پاکستانی پاسپورٹ پر اسرائیل سفر کی اجازت فراہم کردی گئی ہے، ذرائع کے مطابق فیشل بین خلدایک یہودی مذہب کا پیروکار ہے جو کہ پاکستان کے معروف انگریزی جریدے ڈیلی ٹائمز کا کالم نگار ہے، فیشل بین خلدخود کو پاکستان میں یہودیوں اور دیگر اقلیتوں کے مساوی حقوق کے حصول کی جدوجہد کا کارکن ظاہر کرتا ہے ۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹرپر اپنے تازہ پیغام میں فیشل بین خلدنے وزیر اعظم پاکستان عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہاکہ اسے 2جنوری 2019کو پاکستانی وزارت خارجہ نے فون پر اطلاع دی کہ وہ پاکستانی پاسپورٹ پر مقبوضہ بیت المقدس(اسرائیل) جاسکتاہے اور اب وہ پاکستانی پاسپورٹ پراسرائیلی سفارت خانے سے باقاعدہ ویزے کے حصول کے لئے رجوع کررہاہے ، اس نے اپنے اسی ٹوئٹر پیغام میں پاکستانی دفتر خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر فیصل کا شکریہ بھی اداکیا ہے اور ساتھ ہی اس نے اپنے پیغام میں ڈی جی آئی ایس پی آرمیجر جنرل آصف غفور ، چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹوزرداری اوروفاقی وزیر اطلاعات فوادچوہدری کو اس بارے میں آگاہ(Tag) کیا ہے ۔

واضح رہے کہ پاکستان کے قیام کے بعد سے اب تک پاکستانی وزارت خارجہ کی اسرائیل کے بارے میں واضح پالیسی موجود ہے جس میں اسرائیل کے ساتھ کسی قسم کے سفارتی ، تجارتی اور سیاسی تعلقات کی ممانعت ہے جبکہ پاکستانی پاسپورٹ پربھی یہ ہدایت واضح الفاظ میں درج ہے کہ یہ پاسپورٹ ماسوائے اسرائیل تمام ممالک کے لئے کارآمد ہے،سنہ 1990ء کی دہائی میں اوسلو معاہدہ کے بعد اسرائیل کے حق میں پاکستان کا رویہ کچھ نرم ہوا اور یہودی و پاکستانی نمائندوں کی ملاقاتیں شروع ہوئیں۔ ان ملاقاتوں میں اسرائیل کی اولین ترجیح سفارتی تعلقات کا قیام رہی، جبکہ پاکستان نے اسرائیل کے تئیں اپنی جارحانہ پالیسی کی وجہ بیان کرنے کی کوشش کی۔ پاکستانی اہلکاروں کے مطابق ان کی اس جارحانہ پالیسی کی اصل وجہ بالعموم عالم اسلام اور بالخصوص عالم عرب سے اتحاد کا مظاہرہ ہے۔ پاکستان اور اسرائیل ان کے استنبول میں قائم سفارت خانوں کے ذریعے باہمی مذاکرات میں حصہ لیتے ہیں یا ایک دوسرے کے ساتھ معلومات کا تبادلہ کرتے ہیں۔ 2010ء میں ویکی لیکس کے مطابق پاکستان نے اسی استنبول میں قائم اپنے سفارت خانے کے ذریعے اسرائیل کو ایک دہشت گرد گروہ کے بارے میں معلومات فراہم کی تھی۔ تاہم سنہ 2018ء تک ان دونوں ریاستوں میں سرکاری طور پر سفارتی تعلقات قائم نہیں ہوئے اور اب تک دونوں ممالک ایک دوسرے کے دشمن تصور کیے جاتے ہیں،یہاں یہ بات بھی ذہن نشین رہے کہ اس وقت 700 سے 800 کے قریب یہودی پاکستان کےشہری بتائے جاتے ہیں ۔

 

 

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close