کاپی رائٹ کی وجہ سے آپ یہ مواد کاپی نہیں کر سکتے۔
دنیا

نیوزی لینڈ کی مساجد میں فائرنگ سے50کے قریب افراد شہید

نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی 2 مساجد میں نماز جمعہ میں مسلح افراد کی فائرنگ کے نتیجے میں بعض ذرائع کے مطابق40اور بعض ذرائع کے مطابق 50 کے قریب  افراد دشہید اور متعدد افراد زخمی ہوئے ہیں ایک حملہ آور کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق فائرنگ کے واقعات کرائسٹ چرچ میں واقع مسجدِ نور اور مسجد لنٹن میں پیش آئے، جس میں مسلح دہشت گردوں نے مساجد میں داخل ہو کر خودکار ہتھیاروں سے نمازیوں پر فائرنگ شروع کر دی۔

مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ مسجد میں ایک مسلح دہشت گرد داخل ہوا جس نے مشین گن سے فائرنگ کی، دہشت گرد کی شناخت آسٹریلوی شہری برینٹن ٹیرینٹ کے نام سے ہوئی ہے، دہشت گرد فوجی وردی میں ملبوس تھا،جس کی عمر 30 سے 40 سال تھی۔

مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ 3 منٹ تک مسجد میں فائرنگ کرنے کے بعد دہشت گرد مرکزی دروازے سے باہر نکلا، جہاں اس نے گاڑیوں پر بھی فائرنگ شروع کر دی۔

نیوزی لینڈ کے دورے پر آئی ہوئی بنگلا دیش کی کرکٹ ٹیم فائرنگ کی زد میں آنے سے بال بال بچ گئی ہے، جس کے کھلاڑی فائرنگ کے وقت نماز جمعہ ادا کرنے کے لیے مسجد آئے ہوئے تھے۔

نیوزی لینڈ پولیس نے شہریوں کو متاثرہ مسجد سے دوررہنے کی ہدایت کردی ہے، کرائسٹ چرچ کی دیگر مساجد خالی کرالیا گیا ہے جب کہ اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔ خبر ایجنسی کے مطابق شہر کے گرجا گھر اور اسکول بھی بند کردیئے گئے۔

ادھر وزیراعظم نیوزی لینڈ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ آج نیوزی لینڈ کی تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close