پاکستان

نیوزی لینڈ میں مسجد پر حملے کے پیچھے 9/11 کے بعد تیزی سے پھیلنے والا “اسلاموفوبیا” کارفرما ہے، عمران خان

شیعیت نیوز: وزیراعظم پاکستان نے نیوزی لینڈ میں دہشت گردی حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گردوں کا کوئی مذہب نہیں ہوتا۔ وزیراعظم عمران خان نےاپنے  ٹویٹ میں کہا کہ ان بڑھتے ہوئے حملوں کے پیچھے 9/11 کے بعد تیزی سے پھیلنے والا “اسلاموفوبیا” کارفرما ہے جس کے تحت دہشت گردی کی ہر واردات کی ذمہ داری مجموعی طور پر اسلام اور سوا ارب مسلمانوں کے سر تھوپنے کا سلسلہ جاری رہا۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کی جائز سیاسی جدوجہد کو نقصان پہنچانے کیلئے بھی یہ حربہ آزمایا گیا۔ وزیراعظم پاکستان نے لکھا ہے کہ کرائسٹ چرچ (نیوزی لینڈ) میں مسجد پر دہشت گرد حملہ نہایت تکلیف دہ اور قابل مذمت ہے۔ یہ حملہ ہمارے اس مؤقف کی تصدیق کرتا ہے جسے ہم مسلسل دہراتے آئے ہیں کہ دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں، ہماری ہمدردیاں اور دعائیں متاثرین اور انکے اہل خانہ کیساتھ ہیں۔

چیئرمین سینیٹ محمد صادق سنجرانی نے بھی نیوزی لینڈ کی مسجد میں ہونے والی فائرنگ کے واقعے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گرد اپنے مذموم مقاصد میں کبھی کامیاب نہیں ہوسکتے۔ صادق سنجرانی کا کہنا ہے کہ دہشت گردی جہاں بھی ہو اس کی بھر پور مذمت کرتے ہیں دہشت گردوں کا کوئی مذہب نہیں ہوتا۔ سابق صدر آصف علی زرداری نے بھی نیوزی لینڈ میں دہشت گرد حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ پوری دنیا کو دہشت گردی کے خلاف ایک صفحہ پر آنا ہوگا، دہشت گردی ایک ناسور ہے اس ناسور کو ختم کرنا ہوگا۔ سابق صدر نے کہا کہ حکومت نیوزی لینڈ میں مقیم ہم وطنوں سے رابطہ کرے۔ یاد رہے کہ نیوزی لینڈ میں نامعلوم ملزمان نے نماز جمعہ کی ادائیگی کیلئے دو مساجد میں موجود افراد پر فائرنگ کرکے کم ازکم 40 افراد کو جاں بحق اور متعدد کو زخمی کردیا ہے۔ وزیراعظم نیوزی لینڈ کے مطابق 25 زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close