اہم ترین خبریںپاکستان

خطیبِ بےِبدل ،شیعیان کراچی کی ہر دلعزیز شخصیت ، شہید علامہ آغا آفتاب حیدر جعفری کو بچھڑے8برس بیت گئے

شہادت کے وقت آپ کی عمر 42سال تھی، آپ سرزمین پاکستان پر اتحاد بین المسلمین کے داعی تھے، آپ کی شخصیت نوجوانوں میں بےپناہ مقبولیت کی حامل ہے

شیعیت نیوز: خطیبِ بےِبدل ،شیعیان کراچی کی ہر دلعزیز شخصیت ، شہید علامہ آغا آفتاب حیدر جعفری کو بچھڑے8برس بیت گئے ۔ شہید کے قاتل آج بھی آزاد ، بیوہ اور اہل خانہ تاحال انصاف کے منتظر۔ شہید کا خلاءآج تک پورا نا ہوسکادوست احباب اور پوری ملت جعفریہ 8برس گذرجانے کے باجود ان کی یاد کو مٹا نا سکی ۔

تفصیلات کے مطابق شہر قائد میں عزاخانوں ، احتجاجی مظاہروں اور مختلف سیمینار کی رونق سمجھے جانے والے مایہ ناز خطیب اہل بیت ؑ، شعلہ بیاں مقرر، شاعراور معروف بینکارشہید علامہ آغا آفتاب حیدر جعفری اور ان کے رفیق خاص شاہد علی مرزاکی آج 8ویں برسی ہے ۔ شہید کو بچھڑے 8برس بیت گئے لیکن ان کی یاد آج ہمارے دلوں میں تازہ ہے ۔

یہ بھی پڑھیں: کالعدم سپاہ صحابہ اور ناصبی تحریک لبیک کی متشددسوچ کا نتیجہ،بےگناہ اہل سنت بینک مینیجر توہین رسالتؐ کی آڑ میں سکیورٹی گارڈکے ہاتھوں قتل

شہید آغا آفتاب حیدر جعفری کے والد کا نام معراج حسین تھا۔ آپ پیشہ کے اعتبار سے ایک پرائیویٹ بینک کے نائب صدر تھے۔ آپ ایک خطیب اور مذہبی اسکالر ہونے کے ساتھ شاعر بھی تھے۔ آپ پاکستان کے شہر کراچی کے علاقے لائینز ایریا میں رہائش پذیر تھے۔ آپ کی زندگی انتہائی سادہ تھی۔ آپ نے زمانہ نوجوانی اور طالب علمی میں امریکہ مخالف شیعہ طلبہ تنظیم آئی ایس اوکا انتخاب کیا اور کئی سال تک اسی تنظیم کے مختلف عہدوں پر فائز رہتے ہوئے خدمات انجام دیں۔

انہیں 6نومبر 2012 کی صبح ان کے گھر کے نزیک پارکنگ صدر پر کالعدم تکفیری وہابی جماعت سپاہ صحابہ کے دہشت گردوں نے اس وقت نشانہ بنایا جب وہ اپنے ساتھی شاہدعلی مرزا کے ہمراہ حبیب بینک پلازہ جارہے تھے ۔ اندھادند فائرنگ کے نتیجے میں دونوں زخمی موقع پر ہی جام شہادت نوش فرماگئے ۔

یہ بھی پڑھیں: عزاداران حسینیؑ کے خلاف برسرپیکارمسلم لیگ ن اور پی پی پی کی قیادت گلگت بلتستان میں مذہبی کارڈ استعمال کرنے پر مجبور

شہادت کے وقت آپ کی عمر 42سال تھی، آپ سرزمین پاکستان پر اتحاد بین المسلمین کے داعی تھے، آپ کی شخصیت نوجوانوں میں بےپناہ مقبولیت کی حامل ہے۔ آپ پاکستان میں عالمی استعمار امریکہ اور اسرائیل کے خلاف ایک چٹان کی حیثیت سے جانے جاتے تھے۔ آپ فلسطین فائونڈیشن پاکستان کے اساسی ممبر اور مرکزی سرپرست کمیٹی کے اہم رکن تھے۔شہادت سے کچھ عرصہ قبل آپ مجلس وحدت مسلمین سےوابستہ ہوگئے تھے اور ان کی شہادت کی وجہ بھی ایم ڈبلیوایم کے پلیٹ فارم سے اجتماعی جدوجہد ہی بنی ۔

واضح رہے کہ شہید علامہ آفتاب حیدر جعفری کے جلوس جنازہ پر لیاقت آ باد کے نزدیک پولیس اہلکاروں نے براہ راست فائرنگ بھی کی تھی جس کے نتیجے میں مزید 3 عزادار جام شہادت نوش کرگئے تھے ۔

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close