اہم ترین خبریںیمن

الحدیدہ میں سعودی عرب یمنی بچوں کی زندگی کا چراغ گل کرنے میں مصروف

شیعت نیوز : یمن میں سعودی عرب کی جانب سے نشانچیوں کی براہ راست فائرنگ، بارودی سرنگوں اور دھماکا خیز آلات کے ذریعے یمنی بچوں کو موت کی نیند سلانے کا سلسلہ جاری ہے۔ اسی ضمن میں اتوار کے روز ملک کے مغربی صوبے الحدیدہ میں مزید 3 بچے ہلاک اور زخمی ہو گئے۔

ایک مقامی ذریعے نے بتایا کہ الحدیدہ صوبے کے ضلع التحیتا میں الحیمہ علاقے کے جنوب میں سعودی عرب کی جانب سے نصب کیا گیا دھماکہ خیز مواد پھٹنے 7 سالہ انس عبدالکریم جاں بحق اور اس کا 4 سالہ بھائی عبدالمولی زخمی ہو گیا۔ دھماکے میں ایک یمنی شہری عبدالرحمن فیصل السلمی بھی زخمی ہوا۔

یہ بھی پڑھیں : یمن پر سعودی فوجی اتحاد کے حملے انسانی تاریخ کا بدترین المیہ ہیں،اشم اسٹینر

سعودی عرب نے یمن میں مغربی ساحل کو دنیا میں بارودی سرنگوں کے سب سے بڑے علاقوں میں سے ایک بنا دیا ہے۔ یہ امر مقامی لوگوں کے لیے کسی بھیانک خواب سے کم نہیں۔

سعودی عرب کی بچھائی گئی بارودی سرنگوں کے سبب اب تک الحدیدہ کے جنوب اور تعز کے مغرب میں سیکڑوں شہریوں کی جانیں جا چکی ہیں۔ ان میں اکثریت خواتین اور بچوں کی ہے۔ اس کے علاوہ مقامی آبادی کے سیکڑوں افراد زخمی بھی ہوئے اور کئی لوگ دائمی معذوری کا شکار ہو گئے۔

اسی سلسلے میں اتوار کے روز الحدیدہ صوبے کے ضلع التحیتا میں سعودی عرب کے ایک نشانچی کی گولی کا نشانہ بن کر 13 سالہ احمد عبدہ علی زخمی ہو گیا۔ احمد اپنے گھر کے سامنے موجود تھا کہ اس دوران گولی اس کے سینے میں آ کر لگی۔

سعودی عرب کی جانب سے الحدیدہ صوبے کے ضلعوں میں یمنی بچوں کے خلاف انسانی حقوق کی مختلف نوعیت کی سنگین خلاف ورزیاں جاری ہیں۔ اس میں رہائشی علاقوں میں شہریوں کو براہ راست گولہ باری کا نشانہ بنانا شامل ہے۔ اس کے نتیجے میں درجنوں بے قصور افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close