اہم ترین خبریںپاکستان

ہم نےجلوس کا رخ ریڈ زونز کی طرف موڑ دیا تو تمہیں جائے پناہ نہیں ملے گی، علامہ ناظر تقوی

جب ہم اپنی طاقت دکھائیں گے تو تمہاری آنکھیں کھلی کی کھلی رہ جائیں گی

شیعت نیوز : شیعہ علما کونسل صوبہ سندھ کے صدر علامہ ناظر عباس تقوی نے شیعہ جبری گمشدگان کے اہل خانہ کے احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے حکومت اور ریاستی اداروں کو مخاطب کرتے ہوئےکہا ہے کہ جب ہم اپنی طاقت دکھائیں گے تو تمہاری آنکھیں کھلی کی کھلی رہ جائیں ۔

علامہ ناظر تقوی کا کہنا تھا کہ مجھے حکومت اور ریاست پاکستان پر افسوس ہے کہ اس نے اپنے ملک کے شہریوں کے ساتھ اس طرح کا سلوک رکھا ہے کہ جیسے ملت جعفریہ کوئی دہشت گرد قوم ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ میں ریاستی اداروں کو واضح کردینا چاہتا ہوں کہ ملت جعفریہ ایک پر امن اور محب وطن قوم ہے ۔ ہمارے آباؤ اجداد نے یہ ملک بنایا تھا اور ہم اس ملک کے وفادار ہیں۔ ہم نے کبھی ریاست پاکستان کیخلاف کوئی اقدام نہیں کیا لیکن ریاست ہماری حب الوطنی کو ہماری کمزوری سمجھتی ہے ، ہم یہ بتا دینا چاہتے ہیں کہ یہ ہماری کمزوری نہیں ہے۔ ہم اس ملک میں انارکی پیدا نہیں کرنا چاہتے ہم اس ملک میں انتشار نہیں چاہتے ورنہ ہم چاہیں تو اس جلوس کا رخ تمہارے ریڈ زونز کی طرف موڑ دیں تو پھر تم لوگوں کو جائے پناہ نہیں ملے گی اس لئے کہ ہم قاتل نہیں ہم مقتول ہیںجنہیں اس ملک میں قتل کیا گیا ہے ۔

علامہ ناظر تقوی کا کہنا تھا کہ ہم بے گناہ ہیں تم ہمارے لوگوں کے ساتھ زیادتی کرتے ہو اور جب تم سے رابطہ کیا جاتا ہے تو دھوکا دیتے ہو اورجھوٹ بولتے ہو، لوگوں سے غلط بیانی کرتے ہو ۔ اب تمہارا کوئی دھوکا نہیں چلے گا ۔ یہ بھارت کی حکومت نہیں ہے یہ پاکستان کی سرزمین ہے جو کہ ایک آزاد ریاست ہے ۔ تم اس ملک کے باسیوں کو جواب دہ ہو۔

انہوں نے کہا کہ جو بات چیت رمضان میں شروع کی گئی تھی اُسے دوبارہ شروع کیا جائے ۔ وہ ہماری جدوجہد کا پہلا حصہ تھا جو ہم نے صدر پاکستان کے گھر کے باہر دھرنا دیا تھا اب یہ دوسرا مرحلہ ہے اور ہم تیسرے مرحلے کی تیاری کر رہے ہیں تم سوچ نہیں سکتے اور جب ملت جعفریہ تمہارے دروازے پر آکر بیٹھے گی تو تم حیران ہو جاؤ گے کہ ملت جعفریہ یہ اقدام بھی اُٹھا سکتی ہے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ مذاکرات کے جو سلسلےمعطل ہوئے تھے وہ آج دوبارہ شروع ہو رہے ہیں ہم اُمید کرتے ہیں کہ آج بات چیت مثبت رہے گی ورنہ ابھی روز عاشورا کا جلوس باقی ہے۔ ہم جلوسوں کو اس مقصد کیلئے استعمال نہیں کرنا چاہتے کیونکہ جب ہم اپنی طاقت دکھائیں گے تو تمہاری آنکھیں کھلی کی کھلی رہ جائیں گی ۔

انہوں نے حکومت اور ریاستی اداروں کو متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ بھی یاد رکھو کہ اگر ہم نے جلو س کا رخ تمہارے کور کمانڈر یا کسی ادارے کے دفتر کے باہر موڑ دیا تو تمہاری بندوقوں میں گولیوں کی حرارت کم ہوگی جتنی اس ملت کے سینے میں حسین ؑ ابن علیؑ کی حرارت ہے ۔

انہوں نے کہا کہ میں نے کور کمانڈر کیبات اسلئے کی کہ یہاں لاپتہ افراد کےگھر والے بیٹھے ہیں جو ہم سے بار بار کہہ رہے ہیں کہ ہم کورکمانڈر کے دفتر کے باہر بیٹھنے کیلئے تیار ہیں لیکن اب تک ہم انہیں سمجھا رہے ہیں ۔ تم لوگ یہ جان لو کہ یہ تنہا نہیں ہیں پورے پاکستان میں بسنے والے شیعان علیؑ انکے ساتھ ہیں ۔ آج کے مذاکرات میں ہم تمہارے تیورکو دیکھیں گے اگر تیور سہی سمت رہے تو ہم تم سے تعاون کریں گے اور اگر ہمارے ساتھ کوئی بہانہ کیا گیاتو پھر کل ہم جس سمت کا تعین کریں گے تم اس کو سوچ بھی نہیں سکو گے کل جو ہوگا اس کا فیصلہ تمام تنظیموں نے مل کر کرلیا ہے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close