اہم ترین خبریںدنیا

امریکہ، ایران کے ساتھ فوجی جنگ نہیں چاہتا۔ جنرل میک کنزی کا اعتراف

شیعت نیوز : امریکہ کی دہشت گرد فوج کی سینٹرل کمانڈ کے سربراہ جنرل میک کنزی نے اعتراف کیا کہ ہماری پوری توجہ ایران کے ساتھ اقتصادی اور سفارتی جنگ پر مرکوز ہے اور ہم ایران سے فوجی جنگ نہیں چاہتے۔

جنرل میک کنزی نے لبنان کے ایل بی سی آئی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ ایران پر دباؤ ڈالنے کی جنگ ، اقتصادی اور سفارتی جنگ ہے اور ہم یقین کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ امریکہ، ایران سے فوجی جنگ نہیں کرنا چاہتا۔

مغربی ایشیا میں دہشت گرد امریکی فوج کے کمانڈر جنرل میک کنزی نے علاقے میں امریکہ کے اقتصادی مفادات کی جانب اشارہ کرتے ہوئے دعوی کیا کہ ہمارا ایک مقصد اور بھی ہے اور وہ یہ کہ ہم اپنے ملک پر حملے کو روکنا چاہتے ہیں۔

امریکہ کی دہشت گرد فوج کی سینٹرل کمانڈ کے سربراہ نے عراق و افغانستان میں تعمیر و ترقی اور امن و استحکام قائم کرنے میں واشنگٹن کی ناکامی کے بارے میں کہا کہ علاقے میں ان دونوں اہداف کے حصول کے لئے ممالک کا تعاون ضروری ہے۔

یہ بھی پڑھیں : شہید سلیمانی کا قتل اقوام متحدہ کے چارٹر کی واضح خلاف ورزی ہے۔ ایران

دوسری جانب امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے دعوی کیا ہے کہ ان کا ملک بقول ان کے ایران کے میزائل خطرات کا مقابلہ کرنے کے لیے خلیج فارس کے ساحلی عرب ملکوں کے ساتھ تعاون کر رہا ہے۔

متحدہ عرب امارات سے شائع ہونے والے اخبار نیشنل کو انٹرویو دیتے ہوئے امریکی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ واشنگٹن کئی طریقوں سے خلیج فارس کے ساحلی ملکوں کے ساتھ تعاون کر رہا ہے تاکہ بقول ان کے ایران کے میزائل خطرات کا مقابلہ کیا جا سکے۔

امریکی وزیر خارجہ نے یہ دعوی بھی کیا کہ ایران کے خلاف اسلحہ جاتی پابندیوں میں توسیع نہ کی گئی تو مغربی ایشیا عدم استحکام کا شکار ہو جائے گا۔ ان کا دعوی تھا کہ امریکہ خود کو ایران کی بڑھتی ہوئی میزائلی طاقت کے مقابلے میں خلیج فارس کے ملکوں کی سلامتی میں مدد فراہم کرنے کا پابند سمجھتا ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close