ایران

امریکی پولیس کی نسل پرستانہ سوچ، ظلم و بربریت کی اصل وجہ ہے۔ اسحاق جہانگیری

شیعیت نیوز : ایران کے نائب صدر اسحاق جہانگیری نے امریکی پولیس کی نسل پرستانہ سوچ کو ظلم اور بربریت کی وجہ قرار دیا ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے نائب صدر اسحاق جہانگیری نے منگل کے روز امریکی پولیس اہلکاروں کے ہاتھوں ایک امریکی سیاہ فام شہری کو اس کے بچوں کے سامنے وحشیانہ طریقے سے قتل کرنے کے واقعے کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ظلم کی اس سطح کی جڑیں، تاریخی منافرت اور نسل پرستانہ سوچ میں پیوست ہیں جنھیں بدقسمتی سے ٹرمپ کے دور میں ابھرنے کا زیادہ موقع ملا ہے۔

اسحاق جہانگیری نے کہا کہ اس طرح کے جرائم سے نمٹنے میں دنیا بھر میں دوہرے معیار کا وجود ہی کہانی کا سب سے پریشان کن پہلو ہے، دنیا کے ہر کسی کونے میں بیدار ضمیر اس کی مذمت کرتا ہے۔

واضح رہے کہ امریکہ کی ریاست لوزیانا میں امریکی پولیس نے ایک اور سیاہ فام شخص کو سرعام گولیاں مار کر ہلاک کردیا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق یہ واقعہ ایک اسٹور کے باہر پیش آیا جہاں پولیس کی جانب سے 31 سالہ ٹریفورڈپیلرین نامی سیاہ فام امریکی شہری کو 11 گولیاں ماری گئیں جس کے نتیجے میں وہ موقع پر ہی ہلاک ہوگیا۔

یہ بھی پڑھیں : فلسطین کی مکمل آزادی تک اسرائیل کے ساتھ تعلقات کی برقراری نا ممکن ہے۔ او آئی سی

دوسری جانب اقوام متحدہ میں ایران کے نمائندہ دفتر نے کہا ہے کہ آج سلامتی کونسل کے اجلاس میں ایک بار پھر جوہری معاہدے اور قرار داد 2231 میں امریکہ کی تنہائی کا مشاہدہ کیا گیا۔

اقوام متحدہ میں ایران کے نمائندہ دفتر کے بیان میں آیا ہے کہ آج اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اراکین کی اکثریت نے ایک بار پھر ایران کے خلاف سلامتی کونسل کی پابندیاں بحال کرنے کے عمل کو شروع کرنے کے لیے امریکہ کی حالیہ درخواست کو مسترد کردیا۔ اس بیان میں کہا گیا ہےکہ سلامتی کونسل کے اس اقدام سے ایک بار پھر یہ ظاہر ہوتا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 میں امریکہ الگ تھلگ ہو گیا ہے۔

منگل کے روز مشرق وسطیٰ اور فلسطین کے بارے میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس میں روس اور چین نے سلامتی کونسل کے سربراہ سے اپیل کی تھی کہ وہ انہیں ایران کیخلاف بیک اسنیپ میکنزم کے استعمال کیلیے امریکی خط کےحوالے سے مطلع کرے۔

اقوام متحدہ میں انڈونیشیا کے مستقل نمائندہ دیان دیجانی نے جو سلامتی کونسل کا عبوری سربراہ ہے نے اس کے جواب میں کہا کہ سلامتی کونسل کے رکن ممالک کی بھاری اکثریت کی مخالفت کے پیش نظر اس درخواست پر مزید کارروائی نہیں ہوسکتی ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close