اہم ترین خبریںپاکستان

اپنے بچوں کو دیکھے،ان کی آواز سنے عرصہ ہوگیا،دوجبری گمشدہ شیعہ عزاداربھائیوں کی ماں کی فریاد

شیعت نیوز: کراچی سے جبری لاپتہ شیعہ جوانوں سید وجاہت علی اور سید مجاہد علی کی ماں کی فریادعمران خان صاحب!! آپ نے مرغی کو تو دیکھا ہوگا؟ جس کے انڈوں سے آپ گزشتہ دنوں کاروبار کرنے کااعلان کررہے تھے۔مرغی کے چھوٹے چھوٹے بچے ہوتے ہیں ، کبھی بلی قریب آنے لگے تو یہ ان بچوں کو اپنے پیچھے چھپا لیتی ہےاور بلی کے سامنے ڈٹ کر کھڑی ہوجاتی ہے،اسے پتہ ہے کہ میں بلّی کا مقابلہ نہیں کر سکتی،مگر اس کو یہ بھی پتہ ہے کہ میں اپنے آنکھوں کے سامنے بچوں کو بلی کا لقمہ بننے نہیں دے سکتی۔اس کی محبت اور مامتا یہ برداشت نہیں کرتی۔۔۔

خیر۔۔۔۔میں انسانوں کی طرف آتا ہوں۔۔۔۔جانتے ہیں؟کوئی ماں اولاد کیلئے کتنی دعائیں کرتی ہے؟ ماں حج کو جائے تو طواف کعبہ کے بعد اولاد کیلئے دعائیں کرے،مقام ابراہیمؑ پر سجدہ کرے تو اولاد کی حفاظت کی دعا،غلاف کعبہ کو پکڑے تو اولاد کی لمبی عمرمانگے،تہجد کی نماز پڑھے تو بیٹے کے سر پر سہرا سجانے کی دعائیں،کبھی لیلۃ القدر میں جاگنا نصیب ہواتو اولاد کیلئے ہی دعائیں، جانتے ہیں؟

یہ خبربھی لازمی پڑھیں :لاپتہ افراد کے اہل خانہ کی دادرسی میں ناکام حکومت کا تحفہ، خانوادہ اسیران ملت جعفریہ کے خلاف مقدمہ درج

ماں اولادکو جنم دینے کیلئے 9 مہینے کا عرصہ بیماری میں گزارتی ہے،اس دوران اس کا دل نہ کچھ کھانے کو چاہتا ہےاور نہ کچھ پینے کواسے یہ بھی پتہ ہوتا ہے کہ جب ماں بنوں گی تو دو سالوں کے لئے مجھے سونے کا موقع نہیں ملے گا،میں سارا دن بچے کا کام کروں گی،مگر پھر بھی اپنے اولاد کے لئے ہر مصیبت اٹھانے کو تیار رہتی ہے، بچے کی ولادت کے بعد تو وہ اہنے آپ کو بھول جاتی ہے۔ جب بچہ گود میں آجاتا ہے توسمجھتی ہے کہ ساری دنیا کی خوشی میری گود میں آگئی،اگر ہر وقت کچھ ہے تو بس بچے کی فکر ہے،ہر وقت سوچ ہے تو بچے کے بارے میں!! ہر وقت فکر ہے تو بس بچے کی اور۔۔۔بچے کی جدائی کا تصور بھی قریب سے گزرے تو یہ کانپ اٹھتی ہے۔۔۔۔

چھوڑیں یہ سب باتیں۔۔۔۔ بتانا یہ تھا کہ ‘‘ریاست مدینہ’’ میں آج کل ایک ماں اپنے 2 جواں سال بیٹوں کی صرف آواز سننے کیلئے گڑگڑا رہی ہے۔ آپ کے سینے میں اگر دل کی جگہ پتھر نہیں ہے تو ریاستی اداروں کو جبری گمشدگیاں بند کرنے کا پابند بنائیں کیوں کے ماں کی بددعا سے عرشِ الہی بھی کانپ جاتا ہے، اس کے آگے آپ کی حیثیت مٹی کے ذرے سے بھی کم تر ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close