دنیا

امریکی فوجی طیارے کی تباہی، سب سے بڑا نقصان ہے

شیعت نیوز:برطانیہ کے دار الحکومت لندن میں مقیم فوجی امور کے ایک ماہر نے افغانستان میں امریکی فوج کے طیارے کی تباہی کو افغانستان میں گزشتہ پانچ سال کے دوران امریکا کا سب سے بڑا نقصان قرار دیا ہے۔

ڈیفنس وان نامی ویب سائٹ کے تجزیہ نگار جوزف ڈمپسی نے اس واقعے پر اپنے مقالے میں لکھا ہے کہ افغانستان میں امریکی فوجی طیارے کی سرنگونی، حالیہ برسوں کے دوران افغانستان میں امریکا کا سب سے فوجی نقصان سمجھا جاتا ہے۔

برطانوی تجزیہ نگار کا کہنا تھا کہ طیارے کی سرنگونی میں ہلاکتوں کی تعداد کی تائید نہیں کی جاسکتی لیکن گزشتہ پانج سال کے دوران افغانستان میں امریکا کا یہ سب سے بڑا فوجی نقصان ہے۔

امریکی وزارت دفاع نے پیر کے روز اعلان کیا کہ وہ طالبان کے زیر کنٹرول علاقے میں ایک طیارے کی سرنگونی کے بارے میں تحقیقات کر رہی ہے۔

سوشل میڈیا پر حادثے متعلق جاری ہونے والی فوٹیج سے اندازہ ہوتا ہے کہ یہ طیارہ ای الیون قسم کا تھا جیسے امریکی فوج افغانستان میں جاسوسی کی سرگرمیوں کے لیے استعمال کرتی ہے۔

اس پہلے آمدہ خبروں میں کہا گیا تھا کہ افغانستان کی قومی ایئر لائن آریانا کا مسافر طیارہ غزنی میں گر کر تباہ ہوگیا ہے تاہم افغانستان کے شہری ہوابازی کے ادارے نے اس کی تردید کردی تھی۔

طالبان کے ترجمان نے مذکورہ طیارے کو مار گرانے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے دعوی کیا کہ طیارے میں سوار متعدد اعلی افسران سمیت تمام امریکی فوجی اہلکار ہلاک ہوگئے ہیں۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close