اہم ترین خبریںپاکستان

کالعدم لشکر جھنگوی کا وہابی دہشتگردشیخ ممتاز عرف فرعون بلوچستان میں واصل جہنم

ذرائع کے مطابق ملزم شیخ ممتاز عرف فرعون اپنے 2 ساتھیوں کے ساتھ قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں مارا گیا۔

شیعت نیوز: سینٹرل جیل کراچی سے فرار ہونے والاکالعدم لشکر جھنگوی کا وہابی دہشتگردشیخ ممتاز عرف فرعون بلوچستان میں مارا گیا۔ذرائع کے مطابق ملزم شیخ ممتاز عرف فرعون اپنے 2 ساتھیوں کے ساتھ قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں مارا گیا۔

سی ٹی ڈی نے رواں ماہ کے آغاز میں ملزم کے بلوچستان میں موجود ہونے کی نشاندہی کی تھی جب کہ ملزم 2 ماہ قبل کراچی بھی آیا تھا۔ملزم جون 2017 میں سینٹرل جیل کراچی سے فرار ہوا تھا جب کہ ملزم کے دیگر ساتھی ابھی روپوش ہیں۔ ملزم شیخ ممتاز عرف فرعون پولیس اہلکاروں سمیت کئی افراد کے قتل میں ملوث تھا۔

قبل ازیں چند روز قبل کراچی پولیس کی بڑی کارروائی کے نتیجے میں کالعدم وہابی دہشتگرد تنظیم لشکر جھنگوی فرعون گروپ کے تین کارندے گرفتارہوئے تھے ۔ گرفتار شدگان میں راشد بہاری ، سراج الحق سمیت ایک خاتون سہولت کار سکینہ ناز بھی شامل تھیں ۔

تفصیلات کے مطابق پولیس اہلکاروں اور شیعہ مکتب فکر کے افراد کی ٹارگٹ میں ملوث گروہ کے خلاف سولجر بازار پولیس اور سول انٹیلیجنس ایجنسی کی مشترکہ کارروائی کے دوران کالعدم لشکر جھنگوی سے تعلق رکھنے والے دو سہولت کار عورت سمیت گرفتار 2پستول اور 2 ایوان گولے اور واردات میں استعمال ہونے والی موٹرسائیکل بھی برآمدکی گئی تھی ۔

یہ خبر بھی لازمی پڑھیں: کراچی، کالعدم وہابی تنظیم لشکر جھنگوی فرعون گروپ کے 2مرداور 1خاتون سہولت کار گرفتار

ایس ایس پی ایسٹ غلام اظفر مہیسرکے مطابق پولیس اہلکاروں کو کالعدم لشکر جھنگوی شیخ ممتاز عرف فرعون عرف شہزاد گروپ نے شہید کیا۔گرفتار دہشت گرد گروہ کا سرغنہ شیخ ممتاز جون 2017میں سینٹرل جیل کراچی سے اپنے ساتھی احمد علی عرف منا کے ساتھ فرار ہو گیا تھا۔

ملزم پچھلے 5 ماہ سے کراچی میں اپنے ساتھیوں کے ساتھ گلشن ضیاء میں حلیہ تبدیل کر کے رہ رہا تھا۔پولیس حکام کے مطابق ملزمان کے گروہ میں شامل سہولت کاروں اور ٹارگٹ کلرز کی تصویریں سولجر بازار پولیس نے جاری کر دی ہیں ۔

محکمۂ جیل کی تحقیقاتی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا تھا کہ کراچی کی سینٹرل جیل میں قید امریکی صحافی ڈینیئل پرل قتل کیس کے مجرم احمد عمر شیخ کے ساتھ نماز پڑھنے کے لیے ایک اے ایس آئی کی ڈیوٹی لگائی گئی تھی، جس کی ’غفلت‘ کے باعث شدت پسند گروپ لشکر جھنگوی کے دو اہم رکن محمد احمد عرف منا اور شیخ محمد ممتاز عرف فرعون فرار ہو گئےتھے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close