اہم ترین خبریںپاکستان

وطن عزیز میں سعودی عرب کی ایما پر فرقہ وارانہ خانہ جنگی کروانے کی سازش کا انکشاف

سعودی عرب سے مالی امداد وصول کرنے والے چند فرقہ پرست خارجی تکفیری علما اور ان کی تنظیموں اور چند کالعدم دہشت گرد گروہوں کی ایک گھناؤنی سازش کا انکشاف ہوا ہے

شیعیت نیوز: رپورٹس کے مطابق امریکہ اوراسرائیل کے اتحادی سعودی عرب سے مالی امداد وصول کرنے والے چند فرقہ پرست خارجی تکفیری علما اور ان کی تنظیموں اور چند کالعدم دہشت گرد گروہوں کی ایک گھناؤنی سازش کا انکشاف ہوا ہے جس کے مطابق مختلف فرقوں کی اندرونی یا داخلی مجالس، جلوسوں اور کتب میں سے کچھ مواد لے کر اس کی بنیاد پر اشتعال انگیزی اور فرقہ واریت کی آگ بھڑکانے کی کوشش کا منصوبہ بنایا گیا ہے ۔

سعودی عرب پاکستان سے چار وجوہ کی بنیاد پر ناراض ہے ۔ اوّل، پاکستان نے کشمیر کے مسئلہ پر بھارتی بربریت کے سامنے گھٹنے ٹیکنے سے انکار کر دیا ہے اور او آئی سی سے بھارت کو خارج کروانا چاہتا ہے، دوئم، پاکستان نے شام اور قطر کے معاملات میں عرب ملک کی پالیسی کی اتباع سے انکار کیا، سوئم، پاکستان نے امریکہ اور عرب ملک کی خواہش کے خلاف ایران سے تعلقات مزید قریب کر لیے ہیں اور چین، پاکستان اور ایران میں مظبوط روابط استوار ہو رہے ہیں، چہارم، پاکستان نے اسرائیل کو تسلیم کرنے سے دو ٹوک انکار کر دیا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں: ملت جعفریہ کی تمام تنظیموں نے کل شام 5 بجے اہم پریس کانفرنس کا اعلان کردیا

اس انکار کی پاداش میں اسرائیلی، امریکی لابی اور ان کے زیر اثر عرب ملک نے پاکستان کو عراق، شام اور لیبیا کی طرح فرقہ واریت اور خانہ جنگی کی آگ میں دھکیلنے کا فیصلہ کر لیا ہے ۔ حال ہی میں کراچی میں اہل تشیع کے جلوس میں زیارت عاشورہ پڑھنے پر ، جس میں اہلبیت پر ظلم کرنے والوں پر تنقید موجود ہے، کچھ تکفیری مولویوں نے جن کے کالعدم دہشت گرد گروہوں لشکر جھنگوی سپاہ صحابہ سے روابط ہیں، حکومت پاکستان اور آرمی چیف کو دھمکی آمیز بیان جاری کیا ۔

اس کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر ناصبی خارجی لابی کھلم کھلا حضرت علی، حضرت فاطمہ، حسنین کریمین، رسول اللہ کے والدین اور چچا ابو طالب رضی اللہ عنہم کی شان میں گستاخی کر رہی ہے جس کے سرخیل بدبخت فہد حارث، قاری حنیف ڈار، ضیا ناصر، محمد اقبال قریشی عرف بابا کوڈا اور دیگر ہیں ۔ عرب ملک سے راتب لے کر پاکستان کی جڑیں کھودنے والے ان بد بختوں کے خلاف فی الفور کاروائی ہونی چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں: جوہرآباد خوشاب، پولیس کی سرپرستی میں علاقائی امن کوثبوتاژ کرنے کی کوشش، جلوس عزا پرحملہ

یاد رکھیے کہ کراچی میں جلوس عاشورہ میں زیارت عاشورہ کا پڑھا جانا ایک خاص مسلک کا ایونٹ ہے اور وہی اس میں شریک ہیں، یہ دعا دوسرے مسلک کے لیے نہیں ہے، غیر متعلقہ شخص کو جانے کی اجازت بھی نہیں ہوتی، پس کسی بھی فرقے پر اپنی تعبیر ٹھوکنا ناروا ہے۔عربی دعا کی آڈیو کے ساتھ لائیو کوریج ہوئی ۔ اس کی بنیاد پر فرقہ واریت کی آگ بھڑکانا اور میڈیا پر حملہ کرنا ایک گہری سازش ہے اور اس سازش کا آغاز ناصبی بد بختوں نے کیا ہے اور انجام تک وہ بد بخت لے کر جا رہے ہیں جو ؤڈیو بیانوں کے ذریعے پاکستانی حکومت، میڈیا اور آرمی چیف کو دھمکیاں دے رہے ہیں۔

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close