دنیا

فرانسیسی حکومت اور اسرائیل کے درمیان نئی کشیدگی

شیعت نیوز : غرب اردن کے بعض حصوں کو صیہونی حکومت میں ضم کرنے کی اسرائیل کی سازش پر فرانسیسی حکومت اور صیہونی حکومت کے درمیان کشیدگی جاری ہی تھی کہ بیت المقدس میں ایک فرانسیسی شہری کو حراست میں لیے جانے پر یہ کشیدگی اور بڑھ گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق فرانس کی وزارت خارجہ نے ایک بیان جاری کر کے کہا ہے کہ صالح حموری نامی فلسطینی نژاد فرانسیسی شہری کو مقبوضہ بیت المقدس میں تیس جون کو پھر حراست میں لے لیا گيا ہے جبکہ دو سال قبل پیرس کی بہت زیادہ کوششوں سے مذکورہ شہری کو رہا کیا گيا تھا۔

یہ بھی پڑھیں : 6 جولائی یوم فقہ جعفریہ کے موقع پر علامہ سید ساجد نقوی کا پیغام

فرانسیسی وزارت خارجہ نے زور دے کر کہا ہے کہ اس نے سفارتی ذرائع اور اپنے قونصل خانے کے ذریعے صیہونی حکومت سے اس فرانسیسی شہری کو حراست میں لیے جانے کے سلسلے میں جواب طلب کیا ہے اور وہ حموری اور ان کی اہلیہ کی رہائی کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گی۔

قابل ذکر ہے کہ اس فلسطینی نژاد فرانسیسی شہری کو صیہونی حکومت نے سن دو ہزار پانچ اور سن دو ہزار گيارہ میں ایک یہودی ربی عوفادیا یوسف کے قتل کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔

دوسری جانب فرانسیسی حکومت غرب اردن کے بعض حصوں کو صیہونی حکومت میں ضم کرنے کی اسرائيل کی کوششوں کی مخالفت کر رہا ہے۔ فرانس کے صدر میکراں بارہا، صیہونی وزیر اعظم نیتن یاہو کو اس سلسلے میں پیرس کی مخالفت سے آگاہ کر چکے ہیں اور انھوں نے اس منصوبے کے تخریبی نتائج کی طرف سے تل ابیب کو انتباہ دیا ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close