مشرق وسطی

غرب اردن کے الحاق سے وسیع جنگ شروع ہو سکتی ہے۔ اردن

شیعت نیوز: اردن نے بھی غرب اردن کے اسرائیل میں الحاق کے منصوبے کی کھل کر مخالفت کی ہے۔

اردن کے وزیر خارجہ ایمن الصفدی نے بھی غرب اردن کو اسرائیل میں ضم کرنے کے نتائج کی بابت تل ابیب انتظامیہ کو سخت خبردار کیا ہے۔

اردن کے وزیر خارجہ نے کہا کہ فلسطین کی سرزمین کے کسی بھی حصے کے اسرائیل میں الحاق کے کسی بھی منصوبے کی ان کا ملک حمایت نہیں کرے گا۔

اردن کے وزیر خارجہ نے واضح کیا کہ منصفانہ امن کے قیام کے لیے عالمی برداری کو اس طرح کے اقدامات کے مقابلے میں ٹھوس موقف اختیار کرنا ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں : اسرائیلی خفیہ ایجنسی شاباک کا وزیر اعظم نیتن یاہو کو سخت انتباہ

انہون نے کہا کہ یہ مسئلہ، اردن اور صیہونی حکومت کے درمیان کشیدگی پیدا کر دے گا۔

ایمن الصفدی نے امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپئو سے ٹیلیفونی گفتگو میں کہا کہ علاقہ ہی نہیں بلکہ پوری دنیا کے لئے منصفانہ امن بہت ضروری ہے۔

انہوں نے اس ٹیلیفونی گفتگو میں بحران فلسطین کے حل کے لئے دوبارہ مذاکرات شروع کئے جانے کی بات کہی۔

یہ بھی پڑھیں : اسرائیل کے ساتھ مغربی کنارے کا الحاق تیسرے انتفاضے کو جنم دے گا۔ جنرل میخائیل میلنسٹائن

اس سے پہلے شاہ اردن عبد اللہ دوم نے اشپیگل سے گفتگو میں کہا تھا کہ فلسطینی کی سرزمین کا اسرائیل میں الحاق کی وجہ سے صیہونی حکومت کے ساتھ اس کی جنگ شروع ہو جائے گی۔

اردن کے وزیر اعظم نے بھی خبردار کیا تھا کہ غرب اردن کو مقبوضہ علاقوں میں ضم کرنے کی صورت میں ان کا ملک اسرائیل کے ساتھ اپنے تعلقات پر نظر ثانی کرے گا۔

واضح رہے کہ صیہونی حکومت کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ وہ جولائی 2020 سے غرب اردن کے کچھ حصوں کے اسرائیل میں الحاق کا آغاز شروع کرے گا۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close