مشرق وسطی

ہم شام سے غیر ملکی فوجیوں کو نکال باہرکریں گے۔ بثنیہ شعبان

شیعت نیوز: شام کے صدر بشار اسد کی ذرائع ابلاغ کی مشیر بثنیہ شعبان نے ادلب کے بارے میں ماسکو معاہدے کو ادلب کی آزادی اور شامی سرزمین کو غیر ملکی فوجیوں سے آزاد کرانے کے لئے اہم قراردیتے ہوئے کہا کہ شام کی فوج نے حالیہ دو ہفتوں میں شام کی 2 ہزار کلو میٹر مربع زمین کو آزاد غیر ملکی فوجیوں اور دہشت گردوں کے قبضہ سے آزاد کرایا ہے اور ترکی کے فوجیوں اور دہشت گردوں پر کاری ضربیں وارد کی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق اس نے کہا کہ ماسکو معاہدے میں شام کی ارضی سالمیت پر تاکید کی گئی ہے اور شام نے غیر ملکی فوجیوں اور دہشت گردوں سے شامی سرزمین کو آزاد کرانے کا عزم کررکھا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : شام کے صوبے ادلب میں کشیدگی کم ہوئی ہے۔ اسٹفین دوجاریک

بثنیہ شعبان نے شام میں امریکہ اور ترک فوجیوں کی غیر قانونی موجودگی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ اور ترکی کے فوجی ان علاقوں میں موجود ہیں جہاں دہشت گرد ہیں اس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ امریکہ اور ترکی آج بھی دہشت گردوں کی حمایت کررہے ہیں ۔

امریکہ نے القاعدہ اور داعش دہشت گرد تنظیموں کو آج بھی اپنے پروں کے سائے ميں رکھا ہوا ہے اور ترکی بھی دہشت گردوں کی آشکارا حمایت جاری رکھے ہوئے ہے۔

یہ بھی پڑھیں : شام: دہشت گرد گروہ جیش الاسلام کا مرکزی کمانڈر یسین شیخ بزینہ ہلاک

واضح رہے کہ شام میں دو ہزار گیارہ میں امریکہ اور اس کے یورپی اتحادیوں نیز سعودی عرب سمیت بعض مغربی ایشیا کے ملکوں کے حمایت یافتہ دہشت گرد گروہ شام میں داخل ہو گئے تھے جس کے بعد وہاں بحران کا آغاز ہوا تھا ۔

شام میں دہشت گردوں کو داخل کرنے کا مقصد شام کی حکومت کو گراکر علاقے میں طاقت کا توازن اسرائیل کے حق میں تبدیل کرنا تھا ۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close