اہم ترین خبریںپاکستان

اقوام متحدہ میں وزیراعظم کا خطاب جامع تھالیکن مسئلہ کشمیر پرعملی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے، علامہ ساجد نقوی

علامہ ساجد نقوی نے مزید کہا کہ بھارت کا کوئی بھی یکطرفہ قدم کشمیر کی متنازعہ حیثیت ختم نہیں کرسکتا

شیعیت نیوز:  اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے وزیراعظم عمران خان کے خطاب پر تبصرہ کرتے ہوئےشیعہ علماء کونسل پاکستان کے سربراہ علامہ سید ساجد علی نقوی نےکہا کہ گذشتہ سال کی طرح وزیراعظم کا خطاب جامع تھا، لیکن مسئلہ کشمیر پر عملی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے، اس لئے کہ آرٹیکل 370 کا خاتمہ بھارت کا بدنیتی پر مبنی گھناؤنا اقدام ہے اور آرٹیکل 35 اے کے ذریعے غیر کشمیریوں کو شہریت دینے کے عمل سے کشمیریوں کی شناخت ختم کرنے کا مذموم عمل انجام دیا گیا۔

علامہ ساجد نقوی نے باور کرایا کہ اس کے تدارک کیلئے ضروری ہے کہ پاکستانی ریاست کے سربراہ تمام سیاسی جماعتوں، سول سوسائٹی، علماء کرام، وکلاء، دانشوروں، صحافیوں، تاجروں اور دیگر سرکردہ افراد سے مشاورت اور سکیورٹی کے حوالہ سے مکمل جائزہ لیکر مناسب اور مضبوط لائحہ عمل بنائیں، جس پر سختی سے عمل کرایا جائے۔

یہ بھی پڑھیں: بہاولپور،بانی جلوس عزا قمرحسین زیدی کا نام شیڈول فورمیں ڈالنے کے خلاف خواتین ومرد عزاداروں کا دھرنا

علامہ ساجد نقوی نے مزید کہا کہ بھارت کا کوئی بھی یکطرفہ قدم کشمیر کی متنازعہ حیثیت ختم نہیں کرسکتا۔ بھارتی حکومت کا فیصلہ ناقابل قبول ہے۔ انہوں نے کہا کہ غیور کشمیریوں نے اپنی آزادی کیلئے عظیم قربانیاں دیں سلسلہ تاحال جاری ہے، جو ناقابل فراموش اور قابل لائق تحسین ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کشمیر کے بغیر نامکمل ہے، بھارت کو کشمیر کی خصوصی حیثیت بحال کرنی ہوگی اور کشمیریوں کو حق خودارادیت دے کر ان کا جائز حق دینا ہوگا، آخر میں علامہ ساجد نقوی کا کہنا تھا کہ بھارت عالمی قوانین کی مسلسل خلاف ورزی کر رہا ہے اور بھارتی ہٹ دھرمی سے خطے کا امن تباہ ہو رہا ہے، ہم کشمیریوں کو کبھی تنہا نہیں چھوڑیں گے۔ اس کے لیے ہمیں اپنی صفوں میں اتحاد کو مضبوط کرنا ہوگا۔

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close