ایران

ایران کے مرکزی بینک پر پابندی امریکہ کی مایوسی کی علامت : جواد ظریف

شیعت نیوز :اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے نیویارک پہنچنے پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے امریکہ کی جانب سے ایک بار پھرایران کے مرکزی بینک پر پابندی کو عالمی قوانین کی کھلی خلاف ورزی قراردیتے ہوئے کہا کہ امریکہ جب کئی بار مختلف بہانوں سے کسی ادارے پر پابندی عائد کرتا ہے تو اس سے دکھائی دیتا ہے کہ امریکہ کی دباو ڈالنے والی پالیسی ناکامی سے دوچار ہوئی ہے۔

محمد جواد ظریف نے کہا کہ امریکہ ایک بار پھر مرکزی بینک پر پابندی لگا کر اس کوشش میں ہے کہ ایرانی عوام کو ادویات اور غذائی اشیاء کی ترسیل اور عالمی سطح پر خرید و فروخت سے روک سکے۔

محمد جواد ظریف نے اس سوال کے جواب میں کہ فرانسیسی صدر جوہری معاہدے کے نتائج کے حوالے سے واضح حکمت عملی اپنائیں گے کہا کہ اگر فرانس چاہتا ہے کہ کوئی قدم اٹھائے تو اسے چاہئیے کہ امریکی وزارت خزانہ سے ڈکٹیشن نہ لے۔

واضح رہے کہ کل امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران پر نئی پابندیاں عائد کرتے ہوئے ایران کے قومی بینک پر پابندی کا اعلان کیا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اعلان کیا ہے کہ ایران پر سخت ترین پابندیاں عائد کی جا رہی ہیں اور فوری طور پر امریکہ نے ایران کے مرکزی بینک پر پابندی عائد کردی ہے۔

ٹرمپ نے اوول آفس میں آسٹریلیا کے وزیر اعظم اسکاٹ موریسن کے ساتھ ملاقات کے موقع پر پابندی کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ یہ کسی بھی ملک پر نافذ کی جانے والی سخت ترین پابندیاں ہیں۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close