یمن

ایران کے مسافر طیارے کے خلاف امریکی شیطنت کا انصاراللہ بھی جواب دے گا

شیعت نیوز : یمن کی عوامی تحریک انصار اللہ نے مزاحمت کو امریکی شیطنت کے مقابلے میں متحد محاذ قرار دیا ہے۔

تحریک انصار اللہ کے سیاسی دفتر کے رکن محمد البخیتی نے پیر کے روز اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ انصار اللہ ایک مزاحمتی گروہ ہے، انہوں نے کہا کہ انصار اللہ اور ایران، امریکہ و اسرائیل کے خلاف ایک وسیع جنگ میں ایک ہی محاذ میں ہیں۔

انہوں نے شام کی فضائی حدود میں امریکہ کی جانب سے ایران کے مسافر بردار طیارے کے لئے خطرہ پیدا کرنے کی کاروائی پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ایران کے اس مسافر بردار طیارے کے خلاف امریکی کارروائی پر انصار اللہ کا جواب مناسب وقت پر معین کیا جائے گا لیکن اس کا جواب، ایران کے جواب کا متبادل نہیں ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں : سعودی عرب نے داعش و القاعدہ کے ساتھ بھی فوجی اتحاد قائم کر رکھا ہے۔ یمنی وزیر داخلہ

تحریک انصار اللہ کے سیاسی دفتر کے رکن محمد البخيتی نے اسی طرح امریکی شیطنت اور جارحیتوں کے مقابلے میں دنیا کے حریت پسندوں کے ساتھ مل کر یمنی قوم کی مزاحمت پر تاکید کی۔

واضح رہے کہ جمعرات کے روز شام کے راستے لبنان کی جانب پرواز کر رہے ایرانی ایئر لائن ماہان ایئر کے ایک طیارے کے راستے میں دو امریکی جنگی طیاروں نے رکاوٹیں کھڑی کر کے مسافروں کو ہراساں کرنے کی کوشش کی اور اسکے قریب خطرناک شکل میں پرواز کرتے ہوئے دسیوں مسافروں کی جسمانی اور نفسیاتی چوٹوں کا سبب بنے۔

دوسری جانب سعودی جنگی اتحاد نے جنگی بندی کی خلاف ورزی جاری رکھتے ہوئے یمن کے صوبے الحدیدہ کو ایک بار پھر جارحیت کا نشانہ بنایا ہے۔ یمن کی قومی حکومت کے مذاکراتی وفد کے سربراہ محمد عبد السلام نے اقوام متحدہ اور جارح سعودی اتحاد کو امن کے قیام میں رکاوٹ قرار دیا ہے۔

صنعا میں دفاعی اور عسکری ذرائع نے بتایا ہے کہ سعودی جنگی اتحاد نے پچھلے چوبیس گھنٹے کے دوران جنگ بندی کی ایک سو پانج سے زائد مرتبہ خلاف ورزی کی ہے اور صوبہ الحدیدہ کے مختلف علاقوں پر حملے کیے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق سعودی جنگی اتحاد میں شامل کرائے کے فوجیوں نے پچھلے چوبیس گھنٹے کے دوران یمن کے صوبے الحدیدہ کے رہائشی علاقوں پر چوبیس مرتبہ توپ خانے سے حملہ کیا ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close