اہم ترین خبریںعراق

عراق: امریکی فوجی اڈے التاجی پر راکٹوں اور اسپایکر فوجی اڈے پر ڈرون حملے

شیعت نیوز : عراقی ذرائع کا کہنا ہے کہ عراق کے دارالحکومت بغداد کے قریب واقع امریکہ سے وابستہ فوجی اڈے التاجی پر 5 راکٹ فائر کئے گئے جبکہ اسپایکر اڈے پر ڈرون حملے کے بعد دھماکوں کی آوازیں سنی گئیں۔

الاخباریہ ویب سائٹ اور بعض عراقی ذرائع ابلاغ نے آج صبح اپنی بریکنگ نیوز میں کہا کہ اسپایکر اڈے پر ڈرون حملے کے بعد دھماکوں کی آوازیں سنی گئیں جبکہ اس سے قبل کل رات عراق کے دارالحکومت بغداد کے قریب واقع امریکہ سے وابستہ فوجی اڈے التاجی پر 5 راکٹ فائر کئے گئے۔

السومریہ نیوزکی رپورٹ کے مطابق آج علی الصبح اسپایکر فوجی اڈے میں ہتھیاروں کے گودام میں دھماکہ ہوا جس سے آگ بھڑک اٹھی اور فائر بریگیڈ کی 4 گاڑیاں آگ بجھانے کے لئے وہاں پہنچیں اور کافی کوشش کے بعد آگ پر قابو پا لیا گیا۔

واضح رہے کہ مارچ 2020 میں بھی التاجی میں امریکی فوجی اڈے کو نشانہ بنایا گیا تھا جس میں 3 امریکی دہشتگرد اور ایک برطانوی فوجی ہلاک اور 12 سے زائد زخمی ہوئے تھے جس کے بعد امریکی دہشتگردوں نے اگلے ہی روز عراقی رضاکار فورس حشد الشعبی کے مراکز پر بم گرائے تھے جس میں 3 افراد شہید اور متعدد زخمی ہوئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں : عراق میں امریکہ کی طرف سے داعش کی حمایت کا سلسلہ جاری ہے۔ حسن شاکر

دوسری جانب عراق کی وزارت داخلہ نے الصقر چھاؤنی میں ہونے والے دھماکوں کی مزید تفصیلات جاری کی ہیں۔

عراقی وزارت داخلہ کے جاری کردہ بیان کے مطابق یہ دھماکے الصقر چھاؤنی میں پرانے ہتھیاروں کے گودام میں ہوئے۔ عراقی وزارت داخلہ نے گرمی میں بے تحاشہ اضافے کو دھماکوں کی ابتدائی وجہ قرار دیا ہے۔

عراقی وزیر داخلہ عثمان الغانمی نے الصقر چھاؤنی میں ہونے والے دھماکوں کی تحقیقات اور حقائق کا پتہ لگانے کے لیے کمیٹی کی تشکیل کا حکم دے دیا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ بغداد کے جنوب میں واقع الصقر فوجی چھاؤنی کو عراقی پولیس اور عوامی رضاکار فورس حشد الشعبی استعمال کرتی ہیں۔ گزشتہ روز اس چھاؤنی میں ایک سے زائد دھماکوں کی خبریں اور انکی تصاویر منظر عام پر آئی تھیں۔

 

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close