عراق

عراق: تکفیری دہشت گرد گروہ داعش کا مقابلہ کرنے کے لئے غیر ملکی فوجیوں کی ضرورت نہیں

شیعت نیوز: عراق کی مسلح افواج کے ترجمان نے کہا ہے کہ ان کے ملک کو داعش دہشت گرد گروہ کا مقابلہ کرنے کے لئے غیر ملکی فوجیوں کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔

عراق کی مسلح افواج کے ترجمان بریگیڈیئر یحیی رسول نے بدھ کو المیادین ٹی وی چینل سے گفتگو میں کہا ہے کہ عراق میں داعش دہشت گرد عناصر موقع ملنے پر دہشت گردانہ کارروائی کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ عراق میں اس دہشت گرد گروہ کے باقی بچے عناصر کا صفایا کرنے کے لئے ان کے ملک کی فوج کو غیر ملکی فوجیوں کی کوئی ضرورت نہیں ہے اور داعش دہشت گرد عناصر کا مکمل صفایا کئے جانے تک اس تکفیری گروہ کے خلاف کارروائی مسلسل جاری رہے گی۔

یحیی رسول نے داعش دہشت گرد گروہ کا قلع قمع کرنے کے لئے حکومت شام کے ساتھ بھی عراق کے تعاون کی اطلاع دی۔

عراقی فوج اور عوامی رضاکار فورس حشدالشعبی نے اپنے ملک کے مختلف علاقوں میں داعش دہشت گرد گروہ کے باقی بچے عناصر کا صفایا کرنے کے لئے حال ہی میں ایک فوجی آپریشن شروع کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : ایران نے پانچ تیل بردارجہاز وینزویلا پہنچا کر امریکی غرور وتکبر خاک میں ملادیا

دوسری جانب عراق کی عوامی رضاکار فورس حشدالشعبی نے شمالی عراق میں داعش دہشت گرد گروہ کے انفارمیشن انچارج کو گرفتار کر لیا۔

رپورٹ کے مطابق عراق کی عوامی رضاکار فورس حشدالشعبی نے ایک کارروائی کر کے صوبے صلاح الدین سے شمالی عراق میں داعش دہشت گرد گروہ کے انفارمیشن انچارج ایوب عدائی العانی کو گرفتار کر لیا۔

دریں اثنا عراق کے انٹیلی جینس ادارے نے ایک پیغام میں کہا ہے کہ عراق کی سیکورٹی فورس نے چار صوبوں میں پانچ کارروائیاں انجام دے کر مشرقی صوبے الانبار میں داعش دہشت گرد گروہ کے سات کمانڈروں کو گرفتار کر لیا۔

اس رپورٹ کے مطابق عراقی سیکورٹی فورس نے صوبے صلاح الدین اور نینوا میں کاروائیاں انجام دیتے ہوئے داعش دہشت گرد گروہ کے دو خفیہ ٹھکانوں کا بھی پتہ لگایا ہے۔

عراق میں داعش دہشت گرد گروہ کی شکست کے اعلان کے باوجود اس تکفیری گروہ کے کچھ عناصر مختلف علاقوں میں روپوش ہیں جو کبھی بھی دہشت گردانہ حملہ کر بیٹھتے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close