اہم ترین خبریںمقبوضہ فلسطین

اسرائیل کے لڑاکا طیاروں کا غزہ کے جنوب پر فضائی حملے

شیعت نیوز: بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب غزہ پٹی سے داغا جانے والا راکٹ سرحدی صیہونی بستی ناحال عوز کے قریب کھلے میدان میں جا گرا۔

اس سے قبل بدھ کی شام قابض اسرائیلی فوج کے لڑاکا طیاروں نے غزہ پٹی میں دیر البلح اور خان یونس سمیت چار علاقوں میں فضائی حملے کیے تاہم کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔

مذکورہ فضائی حملوں سے قبل قابض اسرائیلی فوج نے ایک ٹویٹ میں اعلان کیا تھا کہ بدھ کی شام غزہ پٹی سے داغا جانے والا ایک راکٹ جنوبی اسرائیل میں گرا۔ چھ روز کے اندر اپنی نوعیت کی اس پانچویں کارروائی میں کوئی جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا۔

یہ بھی پڑھیں :لبیک یا اقصی ، حماس نے مسجد اقصی کے دفاع کا اعلان کردیا

اسرائیلی فوج نے ٹویٹ میں راکٹ گرنے کے مقام کا ذکر نہیں کیا۔ تاہم اسرائیلی میڈیا کے مطابق یہ راکٹ خالی اراضی میں گرا اور اس کے نتیجے میں رہائشی علاقوں میں خطرے کے سائرن بھی نہیں بجائے گئے۔

غزہ پٹی میں وزارت صحت کے مطابق اتوار کے روز شمالی حصے میں قابض اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے تین فلسطینی جاں بحق ہو گئے۔ اسرائیلی فوج نے بتایا کہ اس نے غزہ پٹی سے راکٹ باری کے جواب میں سرحدی باڑ کی جانب ہیلی کاپٹر اور ٹینک کے ذریعے فائرنگ کی۔

کشیدگی کا یہ ماحول اسرائیل میں 17 ستمبر کو ہونے والے قبل از وقت پارلیمانی انتخابات سے پہلے جنم لے رہا ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو کو انتخابات سے قبل بھرپور عوامی مقبولیت حاصل ہے مگر ساتھ ہی انہیں شدید سیاسی دباؤ کا بھی سامنا ہے۔

غزہ پٹی اور اسرائیل کے درمیان پوری سرحد پر مارچ 2018 سے ہفتہ وار احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے۔ مظاہرین کا مطالبہ ہے کہ غزہ پٹی پر دس برس سے زیادہ عرصے سے نافذ اسرائیلی محاصرے کو ختم کیا جائے اور فلسطینی پناہ گزینوں کو واپسی کا حق دیا جائے۔

ان احتجاجی ریلیوں کے دوران سرحدی باڑ کے نزدیک فلسطینیوں اور اسرائیلی فورسز کے بیچ جھڑپیں دیکھی جاتی رہی ہیں۔

ان مظاہروں اور ریلیوں کے آغاز کے بعد سے اب تک اسرائیلی فوج کی فائرنگ اور کارروائیوں میں کم از کم 305 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں۔ ان میں زیادہ تر نے مظاہروں کے دوران تصادم میں اپنی جانیں گنوائیں اور بقیہ افراد غزہ پٹی سے ہونے والی کارروائیوں کے جواب میں اسرائیلی ضربوں کا نشانہ بنے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close