یمن

جارح سعودی حکومت کے اندر جوابی کارروائیاں یمنی افواج کا مسلمہ حق ہے

شیعت نیوز : یمن کی مسلح افواج نے اعلان کیا ہے کہ یمن کے خلاف وحشیانہ جارحیت کا جواب دینا، یمنی افواج کا مسلمہ حق ہے۔

یمن کی مسلح افواج کے ترجمان یحی سریع نے اعلان کیا ہے کہ اگست اور ستمبر میں، یمن کے جوابی حملوں میں جارح سعودی حکومت اور اس کے اتحادیوں کے ایک ہزار فوجی ہلاک اور دو ہزار گرفتار ہوئے ۔

یہ بھی پڑھیں : یمنی فوج کا سعودی فوجی اڈوں پر بیلسٹک میزائلوں سے حملے

انھوں نے بتایا کہ اب تک جارح سعودی اتحاد نے تیس ہزار پانچ سو سات بار، الحدید میں، اسٹاک ہوم جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے جبکہ یمنی افواج نے اس جنگ بندی معاہدے کی اب تک پابندی کی ہے ۔

انھوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے منشور کے مطابق جارحیت کے مقابلے میں یمنی عوام کا دفاع اس ملک کی مسلح افواج کا مسلمہ حق ہے ۔

اقوام متحدہ کے منشور کی شق نمبر اکیاون میں کہا گیا ہے کہ اگر اقوام متحدہ کے رکن کسی ملک پر مسلحانہ حملہ کیا جائے تو، جب تک سلامتی کونسل بین الاقوامی سلامتی اور آشتی کے لئے ضروری اقدام نہ کرے، اقوام متحدہ کا کوئی بھی قانون، انفرادی اور اجتماعی دفاع کے حق کو متاثر نہیں کرسکتا۔

اقوام متحدہ کے منشور کی اس دفعہ کے مطابق قانونی دفاع کے لئے شرط یہ ہے کہ مسلحانہ حملہ کیا گیا ہو اور سلامتی کونسل نے کوئی اقدام نہ کیا ہو۔

سعودی عرب نے مارچ دو ہزار پندرہ سے بعض دوسرے ملکوں کے ساتھ مل کے یمن کے خلاف جارحیت کا آغاز کیا ۔

یمنی عوام پر سعودی حکومت کی مسلط کردہ اس جنگ میں سنگین جانی اور مالی نقصانات ہوئے ہیں اور یہ جنگ مسلحانہ حملے کی مصداق ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب نے امریکہ اور اسرائیل کی حمایت سے اور اتحادی ملکوں کے ساتھ مل کر چھبیس مارچ دوہزار پندرہ سے یمن پر وحشیانہ جارحیتوں کا سلسلہ شروع کر رکھا ہے ۔ اس دوران سعودی حملوں میں دسیوں ہزار یمنی شہری شہید اور زخمی ہوئے ہیں جبکہ دسیوں لاکھ یمنی باشندے اپنے گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہوئے ہیں ۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close