یمن

جنگ بندی کے باوجود یمن پر سعودی اتحاد کے تابڑ توڑ حملے جاری

شیعت نیوز: یمن میں جنگ بندی کے اعلان کے باوجود جارح سعودی اتحاد نے رہائشی علاقوں پر دسیوں مرتبہ بمباری کی ہے۔

المسیرہ کی رپورٹ کے مطابق یمن کے فوجی ذرائع کا کہنا ہے سعودی اتحاد نے جنگ بندی کے دعووں کے بر خلاف گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران صرواح پر 20 مرتبہ، خب و الشعف پر 21 مرتبہ اور صوبہ الجوف پر 2 مرتبہ بمباری کی۔

یمن کی مسلح افواج کے ترجمان نے اعلان کیا ہے کہ سعودی اتحاد کے جنگی طیاروں نے جنگ بندی کے باوجود گزشتہ ایک ہفتے کے دوران یمن کے مختلف علاقوں پر 110 بار فضائی اور 11 مرتبہ زمینی حملے کئے۔

یہ بھی پڑھیں : سعودی عالم دین کا شیعہ مکتب فکر کے بارے میں ایسا بیان کے پڑھ کر آپ حیران رہ جائیں

فارس خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق یمن کی مسلح افواج کے ترجمان یحیی السریع کا کہنا ہے سعودی اتحاد نے جنگ بندی کے دعووں کے بر خلاف گزشتہ ایک ہفتے کے دوران یمن کے مختلف صوبوں مآرب، الجوف، البیضاء اور الضالع پر 11 مرتبہ زمینی حملے کئے۔

ان کا کہنا تھا کہ سعودی اتحاد کے جنگی طیاروں نے بھی گزشتہ ایک ہفتے کے دوران یمن کے مختلف صوبوں مآرب، الجوف، صعدہ، الضالع، البیضاء اور دارالحکومت صنعاء پر 110 حملے کئے۔

یمن کے خلاف جنگ اور جارحیت کا سلسلہ ایسے وقت میں جاری ہے جب سعودی جنگی اتحاد نے نو اپریل کو جنگ بندی کا اعلان کرتے ہوئے دعوی کیا تھا کہ دو ہفتے کی اس جنگ بندی میں مزید توسیع کا امکان پایا جاتا ہے، تاہم سعودی جنگی اتحاد نے اپنی ہی اعلان کردہ جنگ بندی کی ایک دن بھی پابندی نہیں کی اور اس اعلان کے محض چند گھنٹے بعد ہی یمن کے رہائشی علاقوں اور شہری اہداف کو زمینی اور فضائی حملوں کا نشانہ بنانا شروع کر دیا۔

یمنی فریق کا کہنا ہے کہ سعودی اتحاد کی جانب سے جنگ بندی کے اعلان کا مقصد ہتھیاروں اور اپنی طاقت کو مضبوط بنانا ہے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب اور اس کے بعض اتحادی ممالک، امریکہ اور دیگر مغربی ملکوں کی حمایت کے زیر سایہ مارچ دو ہزار پندرہ سے یمن پر وحشیانہ حملے کر رہے ہیں اس عرصے میں دسیوں ہزار یمنی شہری شہید و زخمی اور جبکہ دسیوں لاکھ یمنی بے سر و سامانی کی زندگی گزار نے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close