ایران

خطے میں ہر جگہ مشکلات کا بنیادی سبب امریکہ ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ

شیعت نیوز: ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا کہ امریکہ کو افغانستان پر حملہ نہیں کرنا چاہئیے تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ چاہے وہ افغانستان ہو یا شام، عراق ہو یا یمن، ہر جگہ مشکلات کا بنیادی سبب امریکہ ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے امریکہ کی علاقے میں اپنی شکست کو چھپانے کے لئے کوششوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اپنی ذلت کا مظاہرہ کرتا ہے۔

یہ بھی پڑھین : شام میں ایرانی مفادات کے خلاف ہر کسی اقدام کا منہ توڑ جواب دیں گے۔ عباس موسوی

انہوں نے طالبان کے ساتھ امریکی معاہدے پر دستخط کرنے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ واشنگٹن کے ہتھیار ڈالنے کے ساتھ ہی افغانستان میں امریکی فوج کے برسوں کا خاتمہ ہوا۔

ظریف نے کہا کہ امریکی غاصبوں کو کبھی بھی افغانستان پر حملہ نہیں کرنا چاہئے لیکن انہوں نے ایسا کیا اور اس کے نتائج کا ذمہ دار سب کو ٹھہرایا۔

یہ بھی پڑھین : اب تک ایران سے واپس آنے والے زائرین میں کرونا وائرس کی علامات نہیں پائی گئیں، ترجمان سندھ حکومت

انہوں نے مزید کہا کہ اب ، 19 سال ذلت کے بعد ، امریکہ نے ہتھیار ڈالنے کی پیش کی ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ افغانستان ، شام ، عراق یا یمن میں امریکہ ہی واحد مسئلہ ہے اور علاقے کو چھوڑ دے گا جبکہ بہت ہی گندگی پیش کرے گا۔

یہ بھی پڑھیں : امریکی صدر ٹرمپ نے داعش سے ایران کی نفرت کا اعتراف کر لیا۔ جواد ظریف

تفصیلات کے مطابق، دنیا کے 30 ممالک کے وزرائے خارجہ اور نمائندوں کی موجودگی میں امریکہ اور طالبان کے درمیان افغانستان پر باہمی معاہدے پر دستخط کردیا گيا۔

امریکی وزیر خارجہ نے کہا کہ طالبان نے وعدہ کیا کہ القاعدہ اور دہشت گردوں کے ساتھ تعلقات کو منقطع کرے گا اور ہماری فورسز افغانستان کو چھوڑ دیں گی۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close