یمن

مغربی یمن پر سعودی عرب کے جارح اتحاد کا حملہ، بیس افراد شہید اور زخمی

شیعت نیوز: سعودی عرب کے جارح اتحاد نے مغربی یمن کے الحدیدہ صوبے پر توپخانے سے شیلنگ کر کے بیس افراد کو شہید اور زخمی کر دیا ہے۔

موصولہ اطلاعات کے مطابق سعودی عرب کی قیادت والے جارح سعودی اتحاد نے اتوار کے روز مغربی یمن کے الحدیدہ صوبے کے حی الزہور علاقے پر توپخانے سے فائرنگ کی۔ اس حملے میں چار عام شہری جاں بحق اور سولہ دیگر زخمی ہو گئے۔

یہ بھی پڑھیں : عراق میں دہشت گردی کا بڑا منصوبہ ناکام، داعش سے وابستہ متعدد دہشت گرد گرفتار

جارح اتحاد کے فوجیوں نے اس حملے میں الحدیدہ صوبے میں یمن کی فوج اور عوامی رضا کار فورس کے ٹھکانوں پر توپ کے ایک سو نو گولے فائر کیے۔

المسیرہ کی رپورٹ کے مطابق سعودی جنگی اتحاد نے نو اپریل سے اب تک یمن کے مختلف علاقوں پر ایک سو بیس زمینی اور ایک ہزار پانچ سو چھیاسی فضائی حملے کیے ہیں۔

سعودی اتحاد کے جنگی طیاروں نے بھی پچھلے چوبیس گھنٹوں کے دوران یمن کے مختلف علاقوں پر بمباری کی۔

یہ بھی پڑھیں : امریکہ میں نسلی امتیاز کے خلاف پرتشدد مظاہرے ، 4 ہزار افراد گرفتار

یاد رہے کہ یمن کے الحدیدہ صوبے میں سن دو ہزار اٹھارہ میں سویڈن کے شہر اسٹاک ہوم میں ہونے والے سمجھوتے کے تحت فائر بندی نافذ ہے جس کی سعودی اتحاد مسلسل خلاف ورزی کر رہا ہے۔

سعودی عرب نے امریکہ، متحدہ عرب امارات اور کچھ دیگر ممالک کی مدد سے مارچ سن دو ہزار پندرہ میں یمن پر حملہ کر دیا تھا جو اب بھی جاری ہے۔ اس نے اسی طرح اس غریب عرب ملک کا بری، بحری اور فضائی محاصرہ بھی کر رکھا ہے۔

سعودی اتحاد کے حملوں اور غیر انسانی محاصرے کی وجہ سے اب تک یمن کے سولہ ہزار سے زیادہ افراد جاں بحق، دسیوں ہزار زخمی اور دسیوں لاکھ بے گھر ہو چکے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close