پاکستان

مانسہرہ پولیس نے جنسی زیادتی کیس میں مفتی کفایت اللہ کیخلاف مقدمہ درج کرلیا

پولیس نے جمیعت علمائے اسلام (ف) کے رہنماء کی گرفتاری کے لئے چھاپے مارنے شروع کر دیئے

شیعت نیوز :مانسہرہ پولیس نے معصوم بچے سے جنسی زیادتی کرنے والے تکفیری ملا کو گھر میں پناہ دینے اور متاثرہ بچے کو والدین کو ڈرانے دھمکانے پر جمیعت علمائے اسلام (فضل الرحمان) گروپ کے مرکزی رہنماء مفتی کفایت اللہ کے خلاف مقدمہ درج کر لیا۔

یہ بھی پڑھیں :مانسہرہ میں درندہ صفت تکفیری مولوی کی معصوم بچے سے سو سے زائد بار جنسی ذیادتی

اطلاعات کے مطابق مانسہرہ پولیس نے تھانہ پھلڑہ کی حدود میں واقع مدرسہ اسلامیہ تعلیم القرآن میں 10 سالہ طالبعلم سے 100 سے زائد بار جنسی زیادتی کرنے والے تکفیری مولوی شمس الدین کو گھر میں پناہ دینے اور متاثرہ بچے کے والدین کو ڈرانے دھماکانے پر جمیعت علمائے اسلام (ف) کے مرکزی رہنماء مفتی کفایت اللہ کے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔زرائع کے مطابق معصوم طالبعلم سے بدترین جنسی زیادتی کرنے والے تکفیری ملا شمس الدین نے انکشاف کیا کہ مفتی کفایت اللہ نے اسے گرفتاری سے بچانے کیلئے اپنے گھر میں پناہ دی اور متاثرہ بچے کے والدین کو مقدمہ واپس لینے کے لئے ڈرایا دھمکایا۔

یہ بھی پڑھیں :تکفیری مدرسے میں سفاک مولویوں کی معصوم بچے سے جنسی زیادتی

پولیس نے مفتی کفایت اللہ کے خلاف درج کی گئی ایف آئی آر میں 10 سالہ معصوم بچے سے 100 سے زائد بار جنسی زیادتی کے مرتکب مولوی شمس الدین کو پناہ دینے ، متاثرہ بچے کے والدین کو ڈرانے دھمکانے اور کار سرکار ميں مداخلت کی دفعات شامل کی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں :شجاع آباد میں 13 سالہ عیسائی بچی سے زیادتی کرنے والا تکفیری مولوی قاری زاہد گرفتار

یاد رہے کہ مانسہرہ کے تکفیری مدرسہ اسلامیہ تعلیم القرآن کے درندہ صفت مولوی شمس الدین اور اس کے ساتھیوں کی جانب سے سو سے زائد مرتبہ جنسی زیادتی کا نشانہ بننے کے باعث معصوم بچے کی آنکھوں اور منہ خون جاری ہوگیا تھا۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close