مشرق وسطی

متحدہ عرب امارات کی یمن کے تیل کی تنصیبات پر تسلط جمانے کی کوشش

شیعت نیوز: متحدہ عرب امارات یمن میں تیل کی تنصیبات سمیت اس ملک کے قدرتی ذخائر پر تسلط جمانے کی کوشش کر رہا ہے۔

امارات لیکس نامی سائٹ کے مطابق یمنی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ متحدہ عرب امارت کی حکومت یمن کے ساحلوں کے قریب واقع تیل کی تنصیبات اور دوسرے مراکز پر تسلط قائم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں : یمنی فوج اور رضاکار فورسز کی صوبہ مآرب میں کامیاب پیشقدمی

اس رپورٹ کے مطابق متحدہ عرب امارات سن دوہزار سولہ کے جائزے کو سامنے رکھتے ہوئے باب المندب کے نزدیک راس عمران سمیت سات مقامات پر تیل کی تلاش کا کام شروع کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

سعودی عرب نے امریکہ، متحدہ عرب امارات اور چند دیگر ملکوں کے ساتھ مل کر مارچ دو ہزار پندرہ سے یمن کو زمینی، فضائی اور سمندری جارحیت کا نشانہ بنانے کے علاوہ اس ملک کا مکمل زمینی فضائی اور سمندری محاصرہ بھی کر رکھا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : یمن: سعودی اتحاد افواج کی الحدیدہ پر 248 مرتبہ وحشیانہ گولہ باری

سعودی عرب اور اس کے اتحادیوں کی وحشیانہ جنگ کے نتیجے میں اب تک سولہ ہزار سے زائد یمنی شہری شہید اور دسیوں ہزار زخمی ہوچکے ہیں جبکہ کئی لاکھ لوگوں کو اپنا گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہونا پڑا ہے۔

سعودی عرب اپنے تمام تر وحشیانہ حملوں کے بعد اپنا ایک بھی مقصد اب تک حاصل نہیں کرسکا ۔ پچھلے چند برسوں کے دوران یمن کی فوج اور عوامی رضاکار فورس کی دفاعی طاقت میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے اور محاصرے کے باوجود یمنی فورسز کی دفاعی طاقت میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close