اہم ترین خبریںپاکستان

لاہور، ایم ڈبلیوایم اور شیعہ عمائدین کی مشترکہ پریس کانفرنس،جلوس یوم علی ؑمیں رکاوٹیں مسترد

انہوں نے کہا کہ لاپتہ افراد کی بازیابی میں دانستہ طور پر تساہل برتا جارہا ہے جوتشویش کا باعث ہے ۔اس مسئلے کو حل ہوجانا چاہیے

شیعت نیوز: مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے صوبائی سیکرٹری جنرل علامہ عبد الخالق اسدی نے نامور علمائے کرام اور شیعہ عمائدین کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ یوم علی علیہ السلام کے موقعہ پر ہونے والے مذہبی پروگراموں میں حکومت رکاوٹ بننے سے گریز کرے۔ یوم علی ؑ کی مناسبت سے مجالس پر کسی قسم کی پابندی قابل قبول نہیں۔ اس سلسلے میں ایم ڈبلیو ایم کے سربراہ علامہ راجہ ناصرعباس جعفری نے صدر پاکستان، وزیر اعظم اور وفاقی وزیر مذہبی امور کو خطوط بھی ارسال کر دیے گئے ہیں۔کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے حکومت کی طرف سے جاری ایس او پیز کے مطابق ملت تشیع کواپنی عبادات اور مذہبی رسومات ادا کرنے کا مکمل حق حاصل ہے۔

یہ بھی پڑھیں: 12رمضان المبارک ایک تاریخی دن ہےکہ جب پیغمبراکرم ؑنے مہاجرین اور انصار کے درمیان ”مواخات“بھائی چارہ قائم کیااورمولاعلیؑ کو اپنا بھائی قرار دیا،علامہ ساجد نقوی

صدر پاکستان اور وزیر اعظم نے علماءکے ساتھ اجلاس میں بھی واضح طور پر کہا تھا کہ ایس او پیز کے بیس نکات کی پاسداری کو یقینی بنانے والوں کو مذہبی معاملات کی ادائیگی میں متعلقہ اداروں کی جانب سے کوئی مشکل ہیش نہیں آئے گی مگر سندھ اور پنجاب کی صوبائی حکومتیں یوم علی ؑ  کے جلوسوں میں رکاوٹیں ڈالنے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ مسلکی تعصب کی آڑ میں ملت تشیع کو نشانہ بنانے کی کسی کو بھی ہر گز اجازت نہیں دی جاسکتی۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کا یہ فرض بنتا ہے کہ ملت تشیع کے حوالے سے کوئی بھی یکطرفہ فیصلہ کرنے کی بجائے شیعہ قائدین کو اعتماد میں لیا جائے اور مشاورت کے بعد وہ فیصلے کیے جائیں جن پر دونوں فریق راضی ہوں۔انہوں نے کہاکہ ملک کے پانچ کروڑ تشیع پر کوئی اپنی مرضی کیسے ٹھونس سکتا ہے۔کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے حکومت کی طرف سے جاری ہدایات پر ہمارے لوگ پہلے بھی سختی سے کاربند رہے ہیں اور آئندہ بھی احتیاط کے تمام تقاضوں کو ملحوظ خاطر رکھا جائے گا۔لیکن یہ قطعی ممکن نہیں کہ کسی وبا کو جواز بنا کر ہمیں ہمارے مذہبی معاملات سے روکا جائے۔

یہ بھی پڑھیں: ایم ڈبلیوایم رہنما اسدنقوی کی گورنرپنجاب سے ملاقات، جلوس یوم علیؑ میں رکاوٹ کے خاتمے پر گفتگو

انہوں نے کہا کہ لاپتہ افراد کی بازیابی میں دانستہ طور پر تساہل برتا جارہا ہے جوتشویش کا باعث ہے ۔اس مسئلے کو حل ہوجانا چاہیے۔ہمارا مطالبہ ہے کہ جبری گمشدہ افراد کو منظرعام پر لایا جائے۔لاک ڈاؤن کے باعث عام آدمی کی معاشی مشکلات میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے حکومت کو”لائف ودکورونا“کی پالیسی لانا ہوگی تاکہ معیشت کا پہیہ روانی کے ساتھ چلتا رہے۔

انہوں نے کہا کہ کشمیر میں بھارتی مظالم اور سفاکیت بڑھتی جارہی ہے۔ امت مسلمہ کو چاہیے کہ وہ ہم آواز ہو کر کشمیریوں اور دنیا بھر کے مظلومین کی حمایت میں آواز بلندکریں۔اگرپوری دنیا کے مسلم حکمران بھارت پرسنجیدگی سے زور ڈالیں تو مقبوضہ کشمیر ظلم کی چکی میں پسنے والے مسلمانوں کو دنوں میں نجات مل سکتی ہے،پریس کانفرنس میں چیئرمین عزاداری سیل پنجاب سید خرم عباس نقوی،حاجی سعادت علی نقوی،افسر حسین خاں اور سید حسین زیدی نے بھی شرکت کی۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close