مقبوضہ فلسطین

فلسطینی قبیلے کا العربیہ چینل کے خلاف ہرجانے کا دعویٰ دائر کرنے کا اعلان

شیعت نیوز : فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی میں ایک فلسطینی قبیلے نے سعودی عرب کی معاونت سے نشر ہونےوالے العربیہ چینل کی پالیسیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے اس کی طرف سے عائد کردہ الزامات کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔

فلسطینی قبیلے کا کہنا ہے کہ وہ العربیہ چینل کے خلاف بے بنیاد الزامات عائد کرنے اور شہرت کو ساکھ پہنچانے پر عدالت میں ہرجانے کا دعویٰ دائر کریں گے۔

رپورٹ کے مطابق غزہ کی پٹی میں فلسطینی قبیلے کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ العربیہ چینل نے حال ہی میں ایک جھوٹی رپورٹ نشر کی جس میں یہ دعویٰ کیا گیا کہ اس قبیلے کا ایک نوجوان جس کا تعلق القسام بریگیڈ سے ہے فرار ہو کر اسرائیلی فوج کے پاس چلا گیا ہے۔ یہ محض ایک بے بنیاد الزام تھا۔

یہ بھی پڑھیں : حماس کی اقوام متحدہ میں امریکہ کے گھناؤنے اور بے بنیاد الزامات کی شدید مذمت

متاثرہ خاندانوں شہاب، عید، مسعود، الحاج علی ، حسین اور ابو الخیر کا کہنا ہے کہ العربیہ چینل نے تمام دینی، قومی، عرب اور ثقافتی وابلاغی اقدار پامال کرتے ہوئے قبیلے کےایک 26 سالہ نوجوان عزالدین زھیر بدر حسین علی پربھونڈا الزام عائد کیا کہ وہ فرار ہو کر اسرائیل چلا گیا ہے۔ اس کےعلاوہ یہ دعویٰ کیا گیا کہ حسین علی کے فرار کے بعد غزہ میں حماس نے القسام بریگیڈ کے متعدد ارکان کو حراست میں‌لیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ نہ صرف العربیہ چینل بلکہ اس کے برادر ٹی وی الحدث، ان کے تمام سوشل میڈیا پلیٹ فارمز اور ویب سائٹس پر تمام پیشہ وارانہ اصولوں اور اقدار کو پامال کرتے ہوئے فلسطینی خاندان کی شہرت کو داغ دار کرنے کی مذموم کوشش کی گئی۔

خیال رہے کہ سعودی عرب اور امارات سے نشر ہونے والے العربیہ اور الحدث ٹی وی چینلوں اور فلسطینی امد ویب سائٹ نے گذشتہ ہفتے حماس کے خلاف ایک مذموم مہم چلائی تھی جس میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ القسام بریگیڈ کا ایک کمانڈر عزالدین علی فرار ہو کر اسرائیل چلا گیا ہے۔ اس من گھڑت رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ عزالدین علی اس وقت فرار ہوا جب اس ک بارے میں پتا چلا کہ وہ جماعت کے اندر رہ کر حماس کی مخبری کررہا ہے اور اس کے اسرائیلی فوج کے ساتھ رابطے ہیں۔

حماس اور مقامی فلسطینی انتظامیہ نے ایسے کسی بھی واقعے کی تردید کرتے ہوئے اسے فلسطینی مزاحمتی قوتوں کو بدنام کرنے کی سوچی سمجھی سازش قرار دیا تھا۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close