اہم ترین خبریںپاکستان

کورونا وائرس کی روک تھام کیلئے وفاق اور صوبوں میں کوآرڈینیشن کا فقدان ہے، علامہ ساجدنقوی

اس عمل سے منصوبہ بندی کے تحت زائرین کو تنگ کئے جانے کا تاثر جنم لے رہا ہے۔

شیعت نیوز: کورونا وائرس کی وبا کی روک تھام کیلئے وفاق اور صوبوں میں کوآرڈینیشن کا فقدان نظر آرہا ہے۔ اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ ہم ملک میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کیلئے ہر ممکن اقدامات و احتیاطی تدابیر پر عمل کرنے کے قائل ہیں۔ان خیالات کا اظہار شیعہ علماء کونسل پاکستان کے سربراہ علامہ سید ساجد علی نقو ی نے میڈیا کو جاری بیان میں کیا۔

یہ بھی پڑھیں: کوروناوائرس کے خطرات، ایم ڈبلیوایم کا سالانہ مرکزی کنونشن ملتوی کردیا گیا، علامہ شبیر بخاری

انہوں نے کہاکہ احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کی خاطر تفتان قرنطینہ میں عدم سہولیات کے باوجود سخت سردی کا مقابلہ کرتے ہوئے جو زائرین حفاظتی مدت پوری کر نے اور 24 گھنٹوں کا طویل دشوار سفر طے کرنے کے بعد اپنے اپنے صوبوں میں پہنچے ہیں، اطلاعات ہیں کہ انہیں دوبارہ قرنطینہ میں رکھا جا رہا ہے جہاں سہولیات ناقص ہیں۔ یہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے درمیان عدم  کوآرڈینیشن اور بد انتظامی کا شکار ہے۔ اس عمل سے منصوبہ بندی کے تحت زائرین کو تنگ کئے جانے کا تاثر جنم لے رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ایران سے واپس آنے والے سارے افراد زائرنہیں اور نا ہی کسی خاص کمیونٹی سےہیں، ڈی سی کوئٹہ

علامہ ساجد نقوی نے مزید کہا کہ اگر صوبائی حکومتیں تفتان قرنطینہ پر تحفظات رکھتی ہیں تو زائرین کو تفتان میں کیوں رکھا جارہا ہے۔؟ تمام زائرین کو تفتان قرنطینہ کے بعد گھروں کو روانہ کیا جائے یا تمام کو انکے صوبوں میں قائم قرنطینہ میں لایا جائے تاکہ زائرین کو دو دو بار مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

یہ بھی پڑھیں: کوروناوائرس کا خدشہ، 1900زائرین قرنطینہ مکمل کرکےتفتان بارڈر سے کوئٹہ روانہ

آخر میں انہوں نے کہا کہ غیر منصفانہ برتاؤ کسی صور ت قبول نہیں، کسی بھی ناگہانی آفت کا مقابلہ تدبر اور بلند حوصلے سے کیا جاتا ہے، کورونا وائرس کے نام پر خوف و ہراس پھیلانے کی بجائے مثبت اندازا میں عملی اقدامات کی ضرورت ہے اور جلد از جلد زائرین کی سکریننگ اور تشخیص کے بعد تسلی ہونے پر انہیں گھروں کو روانہ کیا جائے تاکہ زائرین کی مشکلات کو دور کیا جاسکے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close