سعودی عرب

سعودی عرب پر زیرحراست افراد کو رہا کرنے کے لیے دباؤ ڈالا جائے، ہیومن رائٹس واچ کا مطالبہ

انسانی حقوق کی ایک تنطیم نے اظہار رائے کی آزادی کا حوالہ دیتے ہوئے سعودی عرب میں قیدیوں کی آزادی کے لیے بین الاقوامی دباؤ ڈالنےکا مطالبہ کیا۔

اناطولی نیوز کی رپورٹ کے مطابق سویڈن میں مقیم ا سکائی لائن کا کہنا ہے سعودی عرب کا شمان ان ممالک میں ہوتا ہے جہاں حکومت کی مخالف آوازوں کو کچلنے کے سب سے زیادہ انٹرنیٹ کی زیادہ نگرانی کی جاتی ہے، انسانی حقوق کی تنظیم نے ریاض پر دباؤ ڈالنے کے لئے سنجیدہ بین الاقوامی سطح پر سنجیدہ اقدام کرنے کا مطالبہ کیا تاکہ اظہار خیال کی آزادی کے درجنوں قیدیوں کو رہا کروایا جاسکے۔

اسکائی لائن نے یہ کہتے ہوئے سعودی حکام سائبر کرائم کی آڑ دمیں لوگوں کو گرفتار کرلیتے ہیں ،کہا کہ ریاض کا یہ اقدام سول اور سیاسی حقوق سے متعلق بین الاقوامی قوامی کی ایک واضح خلاف ورزی ہے۔

سعودی حکام نے ابھی تک انسانی حقوق کی اس تنظیم کے مطالبہ پر کوئی رد عمل ظاہر نہیں کیا ہے۔

یادرہے کہ مئی 2018 میں ، ریاض نے انسانی حقوق کے بہت سارے مشہور کارکنوں کو ہراست لیا ہےجس میں اس ملک کی متعدد مشہور شخصیات بھی شامل ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close