دنیا

سعودی عرب صحافی خاشقجی قتل میں عدالتی کارروائی کی صلاحیت نہیں رکھتا۔ یاسین اوکتائی

شیعت نیوز : ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان کے مشیر یاسین اوکتائی نے کہا ہے کہ سعودی عرب حکومت مخالف صحافی جمال خاشقجی کے قاتلوں کے خلاف کیس چلانے کی صلاحیت نہیں رکھتا۔

رپورٹ کے مطابق ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان کے مشیر یاسین اوکتائی نے جمال خاشقجی کے ہولناک قتل کے تعلق سے سعودی حکام پر کڑی نکتہ چینی کی ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ اس ہولناک جرم کے ذمہ دار عناصر اور ان کے حمایت کرنے والے روزانہ اس طرح کے جرائم کا ارتکاب کر رہے ہیں اور وہ نہ صرف سعودی عرب میں بلکہ ملک کے باہر بھی انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی میں مصروف ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سعودی حکام نے خاشقجی کے قتل کے بعد ترک حکام کو قونصل خانے کے معائنے کی اجازت نہیں دی اور اس اقدام کے ذریعے تمام شواہد اور دستاویزات نابود کر دئے۔

یہ بھی پڑھیں : لندن میں یمن پر سعودی مظالم کے خلاف احتجاجی مظاہرہ

ترک صدر اردوغان کے مشیر نے جمال خاشقجی کے قتل کے بعد استنبول کا دورہ کرنے والے سعودی اٹارنی جنرل پر بھی کڑی نکتہ چینی کی۔ ان کا کہنا تھا کہ سعودی اٹارنی جنرل نے نہ صرف جمال خاشقجی کی لاش اور قتل کے مجرموں کے اعتراف کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کیں بلکہ انصاف کے قیام کے مقصد سے ان کے کمپیوٹر سسٹم اور ٹیلیفونی بات چیت کا کوئی ریکارڈ بھی فراہم نہیں کیا اور حتیٰ مجرموں کی حمایت میں تمام شواہد و ریکارڈ کو مخفی رکھا اور اطلاعات کو سینسر کیا۔

یاسین اوکتائی نے کہا کہ وہ بیس ملزمین جنہیں استنبول کی عدالت نے گرفتار کئے جانے کے احکامت جاری کئے تھے، سعودی عرب کی عدلیہ نے ان میں سے صرف پانچ ملزموں کے خلاف فرد جرم عائد کی اور جب عدالت نے ان پانچوں افراد کو سزائے موت کا حکم سنا دیا تو باقی ملزموں کو رہا کر دیا اور پھر بعد میں ان پانچوں ملزموں کے خلاف بھی سزائے موت کا حکم منسوخ کر دیا۔

جمعے کے روز استنبول کی عدالت میں سعودی عرب کے حکومت مخالف صحافی جمال خاشقجی کے قاتلوں کے خلاف ان کی غیر موجودگی میں مقدمہ کی سماعت شروع ہوئی ہے۔ اس موقع پر گواہ کی حیثیت سے ترک صدر کے مشیر نے اس کیس میں سعودی عرب کے شاہی دربار میں عدلیہ کے مشیر سعود القحطانی کے کردار کو اہم بتایا۔

انہوں نے کہا کہ جمال خاشقجی نے ان کو یہ اطلاع دی تھی کہ القحطانی نے ان کے ایک بیٹے کو دھمکی دیتے ہوئے اس سے کہا تھا کہ وہ اپنے باپ سے کہے کہ سعودی حکومت پر تنقید کرنے سے باز آجائیں ورنہ انہیں اس کا انجام بھگتنا ہو گا۔

واضح رہے کہ سعودی عرب کے حکومت مخالف صحافی جمال خاشقجی دو اکتوبر دو ہزار اٹھارہ کو ترکی کے شہر استنبول میں سعودی عرب کے قونصل خانے میں داخل ہونے کے بعد لاپتہ ہو گئے تھے اور سعودی حکام، ہفتوں کی تردید کے بعد آخرکار اس بات کا اعتراف کرنے پر مجبور ہو گئے تھے کہ سعودی عرب کے اس حکومت مخالف صحافی کا استنبول میں سعودی قونصل خانے میں قتل کر دیا گیا ہے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close