اہم ترین خبریںپاکستان

داتا دربار دھماکہ کرنے والے بمبا ر کا مسلک بتایا جائے، سوشل میڈیا پر مطالبہ

واضح رہےکہ شیعہ لاپتہ افراد کی بازیابی کے لئے دیئے جانے والے دھرنے کے بعد سے انتظامیہ نے شیعہ مکتب کا میڈیا ٹرائیل شروع کیا ہوا ہے

شیعیت نیوز: گذشتہ روز داتا دربار پر ایک خودکش حملہ ہوا جس میں تقریباً 10 افراد کے شہید ہونے کی اطلاع ہے جن میں پولیس اہلکار سمیت شہری بھی شامل ہیں۔

یہ دھماکہ بدھ کے صبح لاہور میں داتا دربار کے باہر ہوا ، سی سی ٹی وی کی فوٹیج کے مطابق 17 سے 16 سال کے لڑکے نے پولیس وین کے قریب خود کو دھماکہ سے اُڑا دیا۔

اس حملہ کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے کیونکہ ظلم کی ہمیشہ مذمت ہی کرنی چائیئے۔ البتہ پاکستان سے تعلق رکھنے والی شیعہ کمینوٹی نے سوشل میڈیا پر مطالبہ کردیا ہے کہ دھماکہ کرنے والے کا مسلک بتایا جائے۔

واضح رہے کہ یہ مطالبہ سندھ پولیس کی 6 مئی کو کی جانے والی پریس کانفرنس کے بعد شدت سے سامنے آیا ہے جس میں سندھ پولیس کے ایس ایس پی عامر فاروقی نے معتصبانہ پریس کانفرنس کرکے دہشتگردی کے الزامات لگائے۔

کراچی، 19جبری لاپتہ شیعہ جوانوں پر دہشت گردی کے جھوٹے الزامات عائد

انکا کہنا تھا کہ 19 دہشتگرد وں کا تعلق شیعہ فرقہ سے ہے جنہوں نے برادر اسلامی ملک سے ٹریننگ حاصل کی جو پاکستان میں فرقہ واریت پھیلارہے ہیں، اس پریس کانفرنس نے ملت جعفریہ میں شدید اضطراب پیدا کردیا۔

تمام دہشتگردوں کے مسلک کو بھی بتایا جائے اور یہ بھی بتایا جائے کہ انہیں کہاں اور کس نے ٹریننگ دی اور انہیں کتنی تنخواہ ملتی ہے، ملت جعفریہ کا مطالبہ

لہذا شیعہ مسلمانوں نے اعلان کیا ہے اب تمام دہشتگردوں کے مسلک کو بھی بتایا جائے اور یہ بھی بتایا جائے کہ انہیں کہاں اور کس نے ٹریننگ دی اور انہیں کتنی تنخواہ ملتی ہے، لہذا انصاف کا تقاضہ یہ ہے کہ داتا دربار میں ہونے والے دھماکہ کے ذمہ داروں کا بھی مسلک بتایا جائے۔

واضح رہےکہ شیعہ لاپتہ افراد کی بازیابی کے لئے دیئے جانے والے دھرنے کے بعد سے انتظامیہ نے شیعہ مکتب کا میڈیا ٹرائیل شروع کیا ہوا ہے جس پر پوری ملت جعفریہ میں شدید غم و غصہ پایا جارہا ہے۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close