اہم ترین خبریںپاکستان

عزاداری فرض نہیں جیسے الفاظ ملت کی توہین ہے،یوم علی ؑ پر جلوس ہرصورت نکلے گا ،شیعہ تنظیمات

پاکستان ایک اسلامی ریاست ہے اور اس کا آئین ہمیں بنیادی حقوق دینے کا ذمہ دار ہے، عزاداری سید الشہداء ہمارا قانونی اور آئینی حق ہے۔

شیعت نیوز: کراچی پریس کلب میں شیعہ جماعتوں کی مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئےجعفریہ الائنس پاکستان کے صدر علامہ سید رضی جعفر نقوی کا کہنا ہے کہ گذشتہ چند دن پہلے صدر مملکت پاکستان ڈاکٹر عارف علوی صاحب اور وزیراعظم پاکستان عمران خان کی سربراہی میں اجلاس منعقد کئے گئے، جس میں تمام مسالک کے علماء کرام کو مدعو کیا گیا تھا اور اس اجلاس میں تمام علماء کرام کو اعتماد میں لیتے ہوئے 20 نکات پر مشتمل ایک ایس او پی کا اعلان کیا، جو تمام ماہرین طب سے مشاورت کے بعد بنائی گئی تھی، جس کی بناء پر صدر مملکت اور وزیراعظم پاکستان نے اعلان کیا کہ اس ایس او پی پر عمل درآمد کرتے ہوئے (نماز جماعت، نماز جمعہ، نماز تراویح کے ساتھ ساتھ مذہبی اجتماعات مجلس عزا و جلوس عزا) کو منعقد کیا جا سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: الحجت ویلفیئر فاؤنڈیشن کی جانب سےاجناس، نقد رقوم اورسلائی مشینوں کی تقسیم کا سلسلہ جاری ہے، علامہ نعیم الحسن

اس موقع پر معروف عالم دین علامہ شہنشاہ حسین نقوی، شیعہ علماء کونسل سندھ کے صدر علامہ ناظر عباس تقوی، جعفریہ الائنس پاکستان کے نائب صدر علامہ باقر حسین زیدی، ایم ڈبلیو ایم سندھ کے سیکرٹری جنرل علامہ باقر عباس زیدی، مجلس ذاکرین امامیہ کے صدر علامہ نثار احمد قلندری، ہیئت آئمہ مساجد و علمائے امامیہ پاکستان کے جنرل سیکرٹری علامہ رضی حیدر زیدی، مرکزی تنظیم عزاداری کے سربراہ ایس ایم نقی، مرکزی تنظیم عزاء کے رہنما شہزاد رضوی، 21 رمضان المبارک کے جلوس کے منتظم ڈاکٹر علی عارف سمیت ملت جعفریہ کی مختلف تنظیموں آئی ایس او، امامیہ آرگنائزیشن، پیام ولایت فاؤنڈیشن، اسکاؤٹس رابطہ کونسل، بوتراب اسکاؤٹس اور مساجد و امام بارگاہوں کے ٹرسٹیز حضرات بھی موجود تھے۔

یہ بھی پڑھیں: عامرلیاقت کا متعصبانہ رویہ،پی ٹی آئی قومی اسمبلی اور پیمرامیڈیا سے فارغ کرے، ملت جعفریہ کا مطالبہ

رہنماؤں کا کہنا تھا کہ الحمداللہ ہم نے صدر مملکت اور وزیراعظم پاکستان کے اعلان سے پہلے ہی حکومت سے تعاون کرتے ہوئے اور کورونا وائرس سے بچاو کے لئے احتیاط پر عمل کرتے ہوئے نماز جماعت و جمعہ اور مذہبی اجتماعات کو مؤخر کر دیا تھا، لیکن حکومت سندھ نے ہمارے اس تعاون سے فائدہ اٹھاتے ہوئے پاپندی کا ایک نوٹس سوشل میڈیا، پرنٹ میڈیا اور الیکٹرانک میڈیا پر جاری کیا، جو بغیر دستخط کے تھا، جس کی وجہ سے عوام کے احساسات کو ٹھیس پہنچی اور ان کے جذبات مجروح ہوئے، مگر حکومت کی طرف سے اس نوٹس کی تردید نہ کرنے سے ملت جعفریہ میں ایک تشویش کی لہر دوڑ گئی، اس نوٹس میں یہ کہنا کہ عزاداری فرض نہیں ہے اور عزاداری پر پابندی جیسے الفاظ کا استعمال کرنا ملت جعفریہ کی توہین ہے، حکومت ہمیں فرض اور سنت بتانے کے بجائے اپنی ذمہ داری کو ادا کرے، پاکستان ایک اسلامی ریاست ہے اور اس کا آئین ہمیں بنیادی حقوق دینے کا ذمہ دار ہے، عزاداری سید الشہداء ہمارا قانونی اور آئینی حق ہے۔

یہ بھی پڑھیں: حضرت خدیجہ ؓنےرسالت مآبؐکے شانہ بشانہ ہر محاذ پر دین کی بقاء اور اسلام کی سلامتی کیلئے عملی جدوجہد کی، علامہ شہنشاہ نقوی

رہنماؤں نے مزید کہا کہ پاکستان کا کوئی قانون ہمیں عزاداری سے نہیں روک سکتا، لہذا ہم اس عمل کی پُرزور مذمت کرتے ہیں اور ہم سمجھتے ہیں یا تو یہ سوچی سمجھی سازش کے تحت کیا گیا تو پھر یہ حکومت سندھ کے خلاف کوئی سازش ہے، حکومت عوام کو حقائق سے آگاہ کرے، ملت جعفریہ کے تمام عمائدین، علماء کرام، ذاکرین اور تمام تنظیموں و ماتمی انجمنوں، اسکاوئٹس و ٹرسٹیز نے یہ متفقہ فیصلہ کیا ہے کہ صدر مملکت اور وزیراعظم و ماہرین طب کی جانب سے بنائی جانے والی ایس او پی اور سماجی فاصلے پر عمل کرتے ہوئے مجالس عزا و جلوس عزا کا انعقاد کیا جائے گا، ہم حکومت سندھ سے تعاون کی اپیل کرتے ہیں کہ وہ شہادت امیر المومنین کے ایام میں مرکزی جلوس اور شیعہ آبادیوں میں مساجد اور امام بارگاہوں میں خصوصی اقدامات کرتے ہوئے اسپرے کروائیں اور عوام میں سینی ٹائزر و ماسک تقسیم کرے، تاکہ ایس او پی کے مطابق عمل درآمد کیا جاسکے۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close