اہم ترین خبریںپاکستان

موجودہ ملکی حالات کے تناظر میں شیعہ قومی قیادت کی اسلام آباد میں بڑی بیٹھک، اعلامیہ جاری

یہ عظیم الشان اجتماع مطالبہ کرتا ہے کہ ملک بھر میں مجالس عزا اور روایتی جلوسوں کے خلاف جو ایف آئی آرز درج کی گئی ہیں ان کو فی الفور واپس لیا جائے

شیعیت نیوز: موجودہ ملکی حالات کے تناظر میں شیعہ قومی قیادت کی اسلام آباد میں بڑی بیٹھک ہوئی ہے جسے تمام طبقات کی جانب سے کافی سراہا جاریا ہے ۔ بزرگ علمائے شیعہ کی جانب سے جامع امام الصادق ؑ جی نائن اسلام آباد میں منعقدہ علماء و ذاکرین کانفرنس مشترکہ اعلامیہ کے ساتھ اختتام پذیر ہوگئی، اس کانفرنس میں استادالعلماءمفسر قرآن علامہ شیخ محسن نجفی حفظہ اللہ ،سربراہ مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ ناصرعباس جعفری حفظہ اللہ،تحریک اسلامی پاکستان کے سربراہ علامہ سید ساجد علی نقوی حفظہ اللہ ، علامہ حافظ ریاض نجفی حفظہ اللہ ، علامہ شیخ حسن جعفری، علامہ محمد امین شہیدی، علامہ سید تقی شاہ سمیت قومی تنظیمات آئی ایس او ، جسے ایس او ،آئی او کے مرکزی رہنما ، بزرگ علمائےکرام و ذاکرین نےشرکت کی۔

یہ بھی پڑھیں: مفتی منیب کی سرپرستی میں ٹی ایل پی کے دہشتگردوں کی مسجد وامام بارگاہ علی رضاؑ پر فائرنگ،علامہ شہنشاہ نقوی کےخلاف گھٹیا زبان کا استعمال

علماء و ذاکرین کانفرنس میں متفقہ اعلان کردہ قرارداد کچھ یوں ہے:

1) آج کا یہ عظیم الشان اجتماع فرانس سے شائع ہونےوالے چارلی ہیبڈو میگزین میں پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی شان اقدس کےحوالےسے شائع کردہ گستاخانہ خاکوں اور سویڈن میں قرآن مجید کی بے حرمتی کے مذموم واقعے کی پرزور مذمت کرتاہے۔

2) یہ اجتماع عرب امارات، بحرین اوردیگر عرب ممالک کے اسرائیل کےساتھ تعلقات کی بحالی کو فلسطینی موقف سے کھلا انحراف سمجھتے ہوئے اس صورتحال پر اپنے غم و غصہ کا اظہارکرتاہے۔

3) علماءوذاکرین کانفرنس کا یہ عظیم الشان اجتماع مقبوضہ کشمیر کے مسلمان بھائیوں سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے ان پر توڑے جانے والے بھارتی مظالم کی شدید مذمت کرتا ہے۔

4) پاکستان کا آئین اپنے تمام شہریوں کو اظہار رائے کے یکساں مواقع فراہم کرتا ہے اور ملت تشیع اس کی دفاعی و نظریاتی سرحدوں کی محافظ ہے ۔اس ملت نے طول تاریخ میں ہزاروں قیمتی جانوں کی قربانی دے کر وطن عزیز کو عدم استحکام کا شکار ہونے سے بچایا ہے اور کسی بھی صورت شرپسند عناصر کو فرقہ واریت پھیلانے کا موقع نہیں دیا۔اور نہ ہی آئندہ اس قسم کی کسی کوشش کو کامیاب ہونے دیاجائےگا۔

یہ بھی پڑھیں: الباکستانیوں کو کافرکافر شیعہ کافر کے چکرمیں لگا کر پہلے آلِ النہیان اور اب آلِ الخلیفہ آلِ یہود کے بھائی بن گئے

5) یہ عظیم الشان اجتماع مطالبہ کرتا ہے کہ ملک بھر میں مجالس عزا اور روایتی جلوسوں کے خلاف جو ایف آئی آرز درج کی گئی ہیں ان کو فی الفور واپس لیا جائے اوریہ اجتماع یہ بھی واضح کرتا ہے کہ عزاداری سید الشہداء کے راستے میں آنے والی کسی بھی رکاوٹ کو ہرگز قبول نہیں کیا جائے گا لہٰذا ایسے کسی بھی اقدام سے گریز کیا جائے ورنہ حالات کی تما م ترذمہ داری ارباب اختیار پر ہوگی۔

6) شیعہ قوم کےقائدین و بزرگان پوری امت کو ہمیشہ اتحاد ووحدت کی دعوت دی ہے اور فرقہ واریت پھیلانے والے تمام عناصر کی ہمیشہ مذمت کی ہے۔

7) شیعہ قوم کے قائدین و بزرگان ایک غیر ذمہ دار شخص کی طرف سےہونےوالی گستاخی سےبیزاری کااعلان کرتےہیں اور ایک فرد کی دریدہ دہنی کوجوازبناکرشیعہ قوم کےخلاف اسی نوعیت کی دریدہ دہنی کو غیر شرعی اورسنگین جرم قراردیتےہیں۔

8) یہ اجتماع پنجاب اسمبلی کےاجلاس میں پیش کردہ تحفظ بنیاد اسلام بل کو متنازع قرار دیتے ہوئے یکسر مسترد کرتا ہے جبکہ اس حوالے سے پہلے سےہی قانون موجود ہے لہٰذا تحفظ بنیاد اسلام جیسے متنازعہ بل کو فی الفور واپس لیاجائے۔

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close