اہم ترین خبریںپاکستان

لاہور،شیعہ سنی علماء نے دربار بی بی پاکدامنؒ سرکاری ڈیزائن پر تعمیر نو مسترد کر دی

علمائے کرام کا کہنا تھا کہ توسیع کیلئے 14 سال کی کوششوں کو سبوتاژ کیا گیا تھا اور اس کی جگہ ایک منی پروجیکٹ نے موجودہ ناکافی علاقے پر کسی بدعنوانی کے مقاصد کیلئے بنایا تھا

شیعیت نیوز:  تحریک حسینیہ پاکستان کے سربراہ علامہ محمد حسین اکبر، مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ عبدالخالق اسدی، شیعہ علماء کونسل پنجاب کے نائب صدر حافظ کاظم رضا نقوی، جمعیت علمائے پاکستان (نورانی) کے ڈاکٹر امجد حسین چشتی، شیعہ شہریان کے علامہ وقار الحسنین نقوی، ایس یو سی لاہور کے قاسم علی قاسمی سمیت مختلف شیعہ سنی جماعتوں کے قائدین نےلاہور پریس کلب میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم مزار حضرت رقیہ بنت علی (ص) دربار بی بی پاکدامنؒ لاہور کی تعمیراتی کارروائی کیخلاف محکمہ اوقاف کی طرف سے بدنیتی کرپٹ مقصد پر بنائے گئے ڈیزائن کیخلاف شدید احتجاج کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 2010 میں پنجاب اسمبلی نے ایم پی اے ڈاکٹر اسما ممدوٹ کی زبردست اور انتھک کوششوں کے سبب مزار بی بی پاکدامن کی 72 کنال کے رقبے کو شامل کرنے کی ایک قرارداد منظور کی تھی۔ مذکورہ منصوبے کو 135 کنال پنجاب اور وفاقی حکومت نے منظور کیا تھا اور 35 کنال کے پہلے مرحلے کے پی سی 1 کیلئے فنڈ مختص کیے گئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں: مذہبی و مسلکی ہم آہنگی وقت کی ضرورت ہے،ہمیں مسلکی نہیں اسلامی پاکستان چاہیئے،علامہ ناصرعباس

انہوں نے کہا کہ حکومت پنجاب کے محکمہ اوقاف نے مقامی سابقہ ایم این اے کی سیاسی مداخلت اور دکانوں اور مکانات پر غیر قانونی قبضہ کرنیوالوں کیساتھ لیگ میں بدعنوانی کی وجہ سے غیر قانونی زمین پر من مانے منصوبے کی تعمیر میں رکاوٹ پیدا کر دی۔ محکمہ اوقاف نے نیئر علی دادا آرکٹیکٹ کو مزار کے ایک نئے ڈیزائن کیلئے کسی منطقی بدعنوانی وجوہ کیساتھ اور گھٹیا مقصد کیساتھ مقرر کیا اور سید حسن رضا آرکیٹیکٹ کے پہلے سے منظور شدہ ڈیزائن کو شیلف کر دیا گیا جس کا آغاز 12 اکتوبر 2018 کو مقامی لوگوں کے اتفاق رائے سے ہوا تھا۔ علمائے کرام کا کہنا تھا کہ توسیع کیلئے 14 سال کی کوششوں کو سبوتاژ کیا گیا تھا اور اس کی جگہ ایک منی پروجیکٹ نے موجودہ ناکافی علاقے پر کسی بدعنوانی کے مقاصد کیلئے بنایا تھا، نیئر علی دادا آرکیٹیکٹ کا ڈیزائن بالکل ناقص ہے جس میں ایک ہندو مندر کی ناقص شکل کو ظاہر کیا گیا ہے، جبکہ سید حسن رضا کا ڈیزائن واقعی آنکھوں اور دل کو موڑنے والا ہے، خالصتا اسلامی ثقافت سے متاثر کن اور یکساں ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ملت جعفریہ کےبعد قائدین اہل سنت نےبھی بنیاداسلام بل کوغیرضروری قراردیکر مستردکردیا

علمائے کرام کا کہنا تھا کہ نیئر علی دادا آرکیٹیکٹ کے غیر اسلامی ڈیزائن نے دربار بی بی پاکدامنؒ  کی زیارت گاہ کے حجم کو مزید کم کر دیا ہے اور یہاں تک کہ ساری خواتین کی مقدس قبروں کا احاطہ نہیں کیا گیا ہے اور لاکھوں افراد کی رہائش کی ضروریات کو پورا کرنے کی گنجائش بھی بہت کم ہے، پورے سال میں مزار پر برابر ہجوم ہمیشہ رہتا ہے، جب ایک منظور شدہ پروجیکٹ کا وجود ہے، ایک نئے ڈیزائن کے شروع ہونے سے واضح طور پر مشکوک بدعنوانی کا احساس ہوتا ہے جس کی تحقیقات کرائی جائیں۔ انہوں نے کہا کہ مذکورہ بالا نقشے کے پیش نظر، شیعہ اور سنی فرقے مکمل طور پر مزار بی بی پاکدامن کی جاری تعمیر کو مسترد کرتے ہیں اور پہلے مرحلے میں 35 کنال اور مزید 72 پلس کنال تعمیر کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں، جیسا کہ پہلے ہی منظور شدہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ 2010 میں پنجاب اسمبلی اور وفاقی اور پنجاب حکومت سے درخواست کی گئی تھی کہ اس منصوبے کے پہلے مرحلے کو فرم اراکیڈیا کے ڈیزائن کردہ 35 کنال پر آگے بڑھایا جائے یہ ڈیزائن ایک ماڈیولر فیشن میں بنایا گیا ہے اور جب پروجیکٹ بعد میں توسیع کیلئے تیار ہوگا تو یہ ایک آسان اور منظم عمل ہوگا، ہم یہ بھی مشورہ دیتے ہیں کہ لاہور میں اوقاف کی سرزمین پر مقامی افراد کو معاوضہ دیا جائے اور ان کو دوبارہ منتقل کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں: ایم ڈبلیوایم نے محرم الحرام میں بنیاداسلام بل کی آڑمیں فرقہ وارانہ فسادات کا خدشہ ظاہرکردیا

علامہ محمد حسین اکبر نے کہا کہ سید حسن رضا کے منظور شدہ پروجیکٹ کے مطابق بین الاقوامی معیار پر بننے سے زائرین کو درپیش متعدد مسائل حل ہوں گے اور مذہبی سیاحت آئے گی، جس سے مقامی دکانوں کے مالکان فائدہ اٹھائیں گے اور معیشت کو فروغ ملے گا اور پاکستان کی آمدنی کا سب سے بڑا ذریعہ بن جائے گا۔ اس مذہبی مقام کی ترقی اور توسیع کے معاشی اثرات کئی گنا ہیں اور اس کی تکمیل پر اس کی وجہ توجہ کی مستحق ہے۔ انہوں نے کہا کہ افسوس کی بات یہ ہے کہ ہندو سکھوں کے مقامات کی تیاری کی جا رہی ہے لیکن ہمارے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی پوتی جو اسلامی تبلیغ کا اصل ذریعہ ہیں، مقدس زیارت کو یکسر نظرانداز کیا جا رہا ہے، جہاں بہت سے اولیاء جیسے حضرت داتا گنج بخشؒ نے جھکے ہوئے گھٹنوں پر خراج عقیدت پیش کیا۔ کسی چھوٹی چھوٹی ذاتی وجوہ کو رکاوٹ پیدا کرنے کی اجازت نہیں ہونی چاہئے، لہذا ہم سب شیعہ اور سنی وزیر اعظم پاکستان اور وزیراعلیٰ پنجاب سے درخواست کرتے ہیں کہ جلد از جلد ذاتی طور پر مداخلت کریں اور مزار کی غیر مطلوبہ تعمیرات بند کروائیں بصورت دیگر ہم پورے پاکستان میں سڑکوں پر احتجاج کرنے پر مجبور ہوں گے۔

Back to top button
Close