پاکستان

سال 2015شیعہ نسل کشی میں 259افراد شہید ہوئے، اسپیشل رپورٹ

شیعیت نیوز: ۲۰۱۵ سال کے اختتام پر ملک بھر میں شیعہ نسل کشی کے واقعات میں 259افراد شہید ہوئے۔ شیعیت نیوز کی مانیٹرنگ ڈیسک کی رپورٹ کے مطابق  دہشت گردی کے دیگر واقعات نے جہاں بے گناہ معصوم افراد کی جانیں لی وہیں شیعہ نسل کشی کے واقعات میں بھی ملک بھر میں  259 افراد منصب شہادت پر فائز ہوئے۔

گذشتہ سال یہ تعدا د 311تھی، رواں سال شیعہ نسل کشی کے واقعات خصوصاً کراچی میں ٹارگیٹ کلنگ میں کمی واقع ہوئی ہے جو قابل تحسین ضرور ہے لیکن قابل اطمینان نہیں۔  لیکن روان سال پانچ بڑے دہشتگردی کے واقعات ہوئے جن میں  شہادتوں کی تعداد زیادہ رہی، جبکہ کوئٹہ میں ٹارگیٹ کلنگ میں تیزی رہی۔

سال بھر میں ملک کے مختلف شہروں میں شہید ہونے والے شہداٗ کی تفصیل حسب ذیل ہے۔

ماہانہ وار جائزہ رپورٹ

report.jpg

ماہ جنوری ۲۰۱۵
جنوری کا مہینہ شیعہ نسل کشی کے حوالے سے زیادہ حساس رہا، شیعیت نیوز کے مطابق اس مہینہ میں ملک بھر میں مختلف واقعات میں کل  102 شیعہ مسلمان شہید ہوئے، تفصیلات کے مطابق شکار پور میں دوران نماز جمعہ ہونے والے بم دھماکے کے نتیجے میں 73، کراچی میں 13،راولپنڈی میں 11،پشاور میں4اور ڈی آئی خان میں ایک شیعہ مومن شہید ہوئے۔

ماہ فروری
ماہ فروری میں کل 30شہادتیں واقع ہوئیں، جن میں اہم پشاور میں حیات آباد کے علاقہ میں امامیہ مسجد میں ہونے والے بم دھماکے کے نتیجے میں 21شہادتیں واقع ہوئی جبکہ 1ٹارگیٹ کلنگ میں شہادت ہوئی، علاوہ ازین کراچی میں 4،اسلام آباد میں3اور رحیم یار خان میں ایک شیعہ مسلمان کو شہید کیا گیا۔

ماہ مارچ
مارچ میں ہونے والی شیعہ نسل کشی کی تفصیل کچھ یوں ہے
کل شہادتین: 09 کراچی : 03 ، کوئٹہ:02، ڈی آئی خان:02، گوجرانولہ:01، اور حب : 01

ماہ اپریل

ماہ اپریل میں شہادتوں کی تعدا د پانچ تھی، جن میں کراچی ، 02پشاور،01اور کوئیٹہ میں02شیعہ مسلمان شہید  ہوئے۔

ماہ مئی
مئی کے ماہ میں ۱۷ شیعہ مسلمان شہید ہوئے، کراچی میں03،پشاور میں04،کوئٹہ: 08اور پارچنار میں 02شہید ہوئے۔

جون
جون میں کل 06شہادتیں ہوئیں، کوئٹہ میں 05اور ایک کو ڈی آئی خان میں شہید کیا گیا۔
جولائی
جولائی میں شیعہ نسل کشی کی تفصیل کچھ اسطرح رہی کہ کوئٹہ میں 06،کراچی 01،پشاور 01، کل ۸ شیعہ مسلمان جولائی کے ماہ میں شہید ہوئے۔
اگست
اگست کی مہینہ میں کل ۳ شیعہ مسلمان شہید ہوئے، کراچی میں دو جبکہ ایک کوئٹہ میں شہید کیا گیا۔
ستمبر
ماہ ستمبر میں ۹ شیعہ مسلمان شہید ہوئے،کراچی اور روالپنڈی میں 02، پشاور اور چارسدہ میں ایک ایک، جبکہ ڈی آئی خان میں 03  شیعہ مسلمان شہید ہوئے۔
اکتوبر
ماہ اکتوبر بھی شیعہ نسل کشی کی مناسبت سے بھاری ثابت ہوا، شیعیت نیوز کے مطابق تکفیری دہشتگردوں کی جانب سے چھلگری اور جیکب آباد میں جلوس عزا کے دوران دھماکے کیئے گئے ، بلوچستان کے ضلع بولان کے علاقہ چھلگری میں10عزادر شہید ہوئے، جیکب آباد میں28عزادار جن میں اہلسنت محب اہلیبت ،ہندو اور سکھ بھی شامل ہیں ،جبکہ کراچی اور پشاور میں ایک ایک شہید ہوئے۔ یون کل ملا کر 40 شیعہ مومن اس ماہ میں شہید ہوئے۔

نومبر
نومبر کے مہینہ میں 06شہادتیں واقع ہوئیں، کوئٹہ میں 04اور کراچی و پشاور میں ایک ایک۔
دسمبر
ماہ دسمبر بھی 24 شیعہ شہادتوں کے ساتھ رخصت ہوا، پشاور میں ہونے والے دھماکہ میں 22مومنین شہید ہوئے جبکہ اسی دوران لیہ او رکراچی میں بھی ایک ایک شیعہ جوان ٹارگیٹ کلنگ کا نشانہ بنے۔

reportMonthWise_copy.jpg

 

صوبائی جائزہ رپورٹ
اگر صوبہ کی سطح پر شیعہ نسل کشی کا جائزہ لیا جائے تو صورت حال کچھ بنتی ہے کہ روان سال سب سے زیادہ شہادتین صوبہ سندھ میں پیش آئی اسکے بعد خیبر پختنوخوا پھر بلوچستان ،پنجاب اور پارچنارہ میں شیعہ نسل کشی کے واقعا ت ہوئے۔

Provincewise.jpg

provincewise1.jpg

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close