کاپی رائٹ کی وجہ سے آپ یہ مواد کاپی نہیں کر سکتے۔
پاکستان

داعش میں شمولیت اختیارکرنے والی نورین لغاری کا داخلہ منسوخ

نورین لغاری کے والد ڈاکٹر عبدالجبار لغاری کیمسٹری کے پروفیسر ہیں اور سندھ ہائیکورٹ میں اپنی بیٹی کے داخلے کی منسوخی پر سندھ ہائیکورٹ سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

شیعیت نیوز: سندھ یونیورسٹی نے دہشتگرد تنظیم داعش میں شمولیت اختیار کرنے والی طالبہ نورین لغاری کا داخلہ منسوخ کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق سندھ یونیورسٹی نے داعش میں شمولیت اختیار کرنے کیلئے اپنا گھر چھوڑ کر جانے والی نورین لغاری کا داخلہ منسوخ کر دیا ہے، نورین نے رواں برس ہی سندھ یونیورسٹی میں شعبہ انگریزی میں داخلہ لیا تھا۔ نورین لغاری 10 فروری 2017ء کو حیدرآباد اپنے گھر سے بغیر بتائے چلی گئی تھی اور چند دنوں بعد اپنے بھائی کو سوشل میڈیا پر میسیج کیا تھا کہ وہ اپنی مرضی اور خواہش کے تحت خلافت کی سرزمین پہنچ گئی ہے اور بالکل خیریت سے ہے۔

لاہور سے گرفتار نورین لغاری تربیت کیلئے شام بھی گئی

نورین بعد ازاں 17 اپریل 2017ء کو لاہور میں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے آپریشن کے دوران کے ایک گھر سے برآمد ہوئی تھی، جبکہ اس کا ساتھی طارق مقابلے میں مارا گیا تھا۔ نورین نے داعش پروپیگنڈے سے مرعوب ہوکر شمولیت اختیار کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

نورین لغاری دہشتگرد نہیں تھی بلکہ بنے جارہی تھی, آئی ایس پی آر

گھر سے خلافت کی تلاش میں جانے والی نورین لغاری اُس وقت ایم بی بی ایس سال دوم کی طالبہ تھی، تاہم گھر سے بغیر بتائے چلے جانے اور داعش میں شمولیت اختیار کرنے کے باعث لیاقت میڈیکل یونیورسٹی نے بھی نورین لغاری کا داخلہ منسوخ کر دیا تھا۔

نورین لغاری کے والد ڈاکٹر عبدالجبار لغاری کیمسٹری کے پروفیسر ہیں اور سندھ ہائیکورٹ میں اپنی بیٹی کے داخلے کی منسوخی پر سندھ ہائیکورٹ سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

مجھے ایسٹر پر خودکش حملے کے لیے استعمال کیاجانا تھا، نورین لغاری کا اعترافی بیان

سندھ یونیورسٹی انتظامیہ نے داخلے کی منسوخی پر مؤقف اختیار کیا ہے کہ دیکھنا ہوگا کہ لیاقت میڈیکل کالج نے کس بنیاد پر داخلہ منسوخ کیا تھا۔

ٹیگز
Show More

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close